خالی بٹوہ اس کے ہاتھوں میں تھما دیتا ہوں

خالی بٹوہ اس کے ہاتھوں میں تھما دیتا ہوں
خالی بٹوہ اس کے ہاتھوں میں تھما دیتا ہوں

  

خالی بٹوہ اس کے ہاتھوں میں تھما دیتا ہوں

یوں ہتھیلی پر کبھی سرسوں جما دیتا ہوں

جب کبھی بیگم کا پارہ حد سے زیادہ چڑھ گیا

سب سے پہلے جوتیاں اس کی چھُپا دیتا ہوں

مزید :

شاعری -مزاحیہ شاعری -