دو کسی اخبار کو یہ تار،میں روزے سے ہوں| ضمیر جعفری |

دو کسی اخبار کو یہ تار،میں روزے سے ہوں| ضمیر جعفری |
دو کسی اخبار کو یہ تار،میں روزے سے ہوں| ضمیر جعفری |

  

مجھ سے مت کر یار گفتار میں روزے سے ہوں

ہو نہ جائے تجھ سے بھی تکرار ، میں روضے سے ہوں

ہر کسی سے کرب کا اظہار ، میں روزے سے ہوں

دو کسی اخبار کو یہ تار،میں روضے سے ہوں

میرا روضہ اک بڑا احسان ہے لوگوں کے سر پر

مجھ کو ڈالو موتیے کے ہار، میں روزے سے ہوں

میں نے ہر فائل کی دمچی پر یہ مصرع لکھ دیا

کام ہو سکتا نہیں سرکار، میں روضے سے ہوں

اے مری بیوی مرے رستے سے کچھ کترا کے چل

اے بچو! ذرا ہشیار، میں روضے سے ہوں

شام کو بہر زیارت آ سکتا ہوں مگر

نوٹ کر لیں دوست، رشتہ دار، میں روضے سے ہوں

تو یہ کہتا ہے بہ لحن تر کوئی تازہ غزل

میں یہ کہتا ہوں کہ برخوردار، میں روضے سے ہوں

شاعر: ضمیر حسین جعفری

Mujh   Say    Mat   Kar    Yaar    Guftaar    Main   Rozay   Say   Hn

Ho   Na   Jaaey   Tujh   Say   Bhi   Takraar    Main   Rozay   Say   Hn

 Har   Kisi    Say    Karb    Ka    Izhaar    Main   Rozay   Say   Hn

Do   Kis    Akhbaar    Ko    Yeh   Taar    Main   Rozay   Say   Hn

 Mera    Roza    Ik    Barra    Ehsaan   Hay   Logon   K    Sar   Par

Mujh    Ko   Daalo    Motiay    K    Haar    Main   Rozay   Say   Hn

 Main    Nay    Har    File    Ki   Dumchi    Par   Yeh    Misra    Likh   Diya

Kaam   Ho   Sakta    Nahen    Sarkaar    Main   Rozay   Say   Hn

 Ay    Miri    Bive    Miray    Rastay   Say    Kuchh    Katraa    K    Chall

Ay    Bchho!    Zaraa    Hushiyaar    Main   Rozay   Say   Hn

 Shaam    Ko     Bahr-e- Ziyaarat    Aa    Sakta    Hun   Magar

 Note    Kar    Len    Dost   ,   Rishtadaar    Main   Rozay   Say   Hn

 Tu     Yeh     Kehta    Hay    Ba    Lehn-e-Tar    Koi   Ghazal

 Main   Yeh    Kehta   Hun    Barkhurdaar    Main   Rozay   Say   Hn

 

Poet: Zameer   Jafri

مزید :

شاعری -مزاحیہ شاعری -