تجھے کس تمنا سے ہم دیکھتے ہیں| وحید احمد |

تجھے کس تمنا سے ہم دیکھتے ہیں| وحید احمد |
تجھے کس تمنا سے ہم دیکھتے ہیں| وحید احمد |

  

تجھے کس تمنا سے ہم دیکھتے ہیں

میں بستر میں پڑا تھا

اور وڈیو چیٹ کرتا تھا

اچانک چوکھٹے میں عکس میرا رُک گیا

شاید کوئی نیٹ ورک کی پیچیدگی تھی

کوئی ترسیلی رُکاوٹ تھی

اچانک عکس میرا رُک گیا

تو میں نے سوچا

اور پھراِک روز جب میں رُک گیا

توں یوں نظر آؤں گا

جیسے آج خود کو دیکھتا ہوں

شاعر: وحید احمد

(شعری مجموعہ:نظم نامہ؛سالِ اشاعت،2012 )

Tujhay   Kiss   Tamanna   Say   Ham   Daikhtay   Hen

Main   Bistar   Men   Parra   Tha

Aor   Video   Chat   Karta   Tha

Achaanak   Chokhatay   Men   Aks   Mera   Ruk   Gaya

Shayad   Network   Ki   Koi   Paicheedgi   Thi

Koi   Tarseeli   Rukaawat   Thi

Achaanak   Aks   Mera   Rukh   Gaya

To   Main   Nay   Socha

Aor   Phir   Ik   Roz   Jab   Main   Ruk   Gaya

To   Yun   Nazar   Aaun   Ga

Jaisay   Aaj   Khud   Ko   Daikhta   Hun

 

Poet: Waheed   Ahmad

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -