چوڑیاں بوجھ ہیں کلائی پر| راول حسین |

چوڑیاں بوجھ ہیں کلائی پر| راول حسین |
چوڑیاں بوجھ ہیں کلائی پر| راول حسین |

  

پاؤں جمتے نہیں ہیں کائی پر

تف ہے ایسی کسی رسائی پر

ایک بوسیدہ شہر ہاتھ لگا

اِک نئے شہر کی کھدائی پر

ایسے نازُک سے واسطہ ہے جسے

چوڑیاں بوجھ ہیں کلائی پر

گھر نہ تقسم کر مرے بھائی

تیرا احسان ہو گا بھائی پر

دوگھڑی کا وصال بھاری ہے

زندگی بھر کی آشنائی پر

ایسے حالات ہیں کہ میرا باپ

معترض ہے مری پڑھائی پر

کارخانے سے چھٹیاں لوں گا

گاؤں میں فصل کی کٹائی پر

شاعر: راول حسین

(راول حسین کی وال سے)

Paaon   Jamtay   Nahen   Hen   Kaai   Par

Tuff    Hay   Aisi   Kisi   Rasaai   Par

 Aik   Boseeda    Shehr   Haath   Laga

Ik   Naey   Shehr   Ki   Khudaai   Par

 Aisay   Naazuk   Say  Waasta   Hay   Jisay

Choorriyaan    Bojh    Hen   Kalaai   Par

 Ghar   Na   Taqseem    Kar   Miray   Bhai

Tera    Ehsaan   Ho   Ga    Bhaai   Par

 Do   Gharri   Ka   Visaal   Bhaari   Hay

Zindagi   Bhar   Ki    Aashnaai   Par

 Aisay   Halaat   Hen   Keh   Mera   Baap

Motariz   Hay   Miri   Parrhaai   Par

 Kaarkhaanay   Say   Chhutiyaan   Lun   Ga

Gaaon   Men   Fasl   Kia   Kattaai   Par

 Poet: Rawal   Hussain

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -