تم پاس نہیں ہو تو عجب حال ہے دل کا

تم پاس نہیں ہو تو عجب حال ہے دل کا
تم پاس نہیں ہو تو عجب حال ہے دل کا

  

کیا جانیے کس بات پہ مغرور رہی ہوں

کہنے کو تو جس راہ چلایا ہے چلی ہوں

تم پاس نہیں ہو تو عجب حال ہے دل کا

یوں جیسے میں کچھ رکھ کے کہیں بھول گئی ہوں

پھولوں کٹوروں سے چھلک پڑتی ہے شبنم

ہنسنے کو ترے پیچھے بھی سو بار ہنسی ہوں

تیرے لیے تقدیر مری جنبشِ ابرو

اور میں ترا ایمائے نظر دیکھ رہی ہوں

صدیوں سے مِرے پاوں تلے جنتِ انساں

میںجنتِ انساں کا پتہ پوچھ رہی ہوں

جس ہاتھ کی تقدیس نے گلشن کو سنوارا

اُس ہاتھ کی تقدیر پہ آزردہ رہی ہوں

قسمت کے کھلونے ہیں اُجالا کہ اندھیرا

دل شعلہ طلب تھا سو بہر حال جلی ہوں

شاعرہ:اداجعفری

Kia Jaaniay Kiss Baat Pe Maghroor Rahi Hun

Kehnay Ko To Jiss Raah Chalaay aHay Cahli Hun

Tum Paas Nahen Ho To Ajab Haal Hay Dil Ka

Yun Jaisay Main Kuch Rakh K kahen Bhool Gai Hun

Phoolon K Kattoron Say Chalak Parrti Hay Shabnam

Hansanay Ko Tiray Peechay Bhi Sao Baar Hansi Hun

Teray Liay Taqdeer Miri Junbish e Abru

Aor Main Tira Emaa e Nazar Dekh Rahi Hun

Sadion Say Miray Paon Talay jannat e Insaan

Main Jannat e Insaan Ka Pta Pooch Rahi Hun

Dil Ko To Ye Kehtay Hen Keh Bass Qatra e Khoon Hay

Kiss Aas Pe Ay Sang e Sar e Raah Chali Hun

Jiss Haath Ki Taqees Nay Gulshan Ko Sanwaara

Uss Haath Ki Taqdeer Pe Azurda Rahi Hun

Qismat K Khilonay Hen Ujaala Keh Andhera

Dil Shola Talab Tha So Bahar Haal Jali Hun

Poetess: Ada Jafri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -