ذہن سے دل کا بار اُترا ہے|ابن صفی |

ذہن سے دل کا بار اُترا ہے|ابن صفی |
ذہن سے دل کا بار اُترا ہے|ابن صفی |

  

ذہن سے دل کا بار اُترا ہے

پیرہن تار تار اترا ہے

ڈوب جانے کی لذّتیں مت پوچھ

کون ایسے میں‌ پار  اُترا  ہے

ترکِ مے کرکے بھی بہت پچھتائے

مدّتوں میں‌ خمار اُترا ہے

دیکھ کر میرا دشتِ تنہائی

رنگِ روئے بہار  اُترا ہے

پچھلی شب چاند میرے ساغر میں

پے بہ پے بار بار اُترا ہے

شاعر:  ابنِ صفی

Zehn     Say   Dil   Ka   Baar   Utra   Hay

Pairhan   Taar   Taar   Utra   Hay

 Doob   Jaany   Ki   lazzaten   Mat   Poochh

Kon   Aisay   Men   Paar   Utra   Hay

Tark-e-May   Kar   K   Bahut   Pachhtaaey

Muddaton   Men   Khuaar   Utra   Hay

 Daikh   Kar   Mera   Dasht-e-Tanhaai

Rang-e-Roo-e-Bahaar   Utra   Hay

 Pichhli   Shab   Chaand   Meray   Saaghar   Men

Pay   Ba   Pay  ,   Baar   Baar   Utra   Hay

 Poet: Ibn-e-Safi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -