آنکھ اُس پر جفا سے لڑتی ہے|ابراہیم ذوق |

آنکھ اُس پر جفا سے لڑتی ہے|ابراہیم ذوق |
آنکھ اُس پر جفا سے لڑتی ہے|ابراہیم ذوق |

  

آنکھ اُس پر جفا سے لڑتی ہے

جان کشتی قضا سے لڑتی ہے

شعلہ بھڑکے گا کیا سرِ بزم

شمع تجھ بن ہوا سے لڑتی ہے

صف مژگاں  تری خدا کی پناہ

اک بلا اک بلا سے لڑتی ہے

آج کہتے ہو کیا طبیعت کو

عشق میں ابتدا سے لڑتی ہے

آج دنیا نے صلح کی کس دن

یہ لڑاکا سدا سے لڑتی ہے

دیکھو اس چشمِ مست کی شوخی

جب کسی پارسا سے لڑتی ہے

ذوق دنیا ہے مکر کا میداں

نگہ اس کی دغا سے لڑتی ہے

شاعر: ابراہیم ذوق

 ( شعری مجموعہ:دیوانِ ذوق  )

Aankh   Uss   Pur   Jafaa   Say   Larrti   Hay

Jaan   Kushti   Qazaa   Say   Larrti   Hay

 Shola   Bharrkay   Ga   Kaya   Sar-e-Bazm

Shama   Tujh   Bin   Hawaa   Say   Larrti   Hay

 Saf-e-Mizzgaan Tiri   Khuda   Ki   Panaah

Ik   Balaa   Ik   Balaa   Say   Larrti   Hay

 Aaj   Kaihtay   Ho   Kaya   Tabeeat   Ko

Eshq   Men   Ibtidaa   Say   Larrti   Hay

 Aaj   Dunya   Nay   Sulah   Ki   Kiss   Din

Yeh   Larraaka   Sadaa   Say   Larrti   Hay

 Daikho   Uss   Chashm-e-Mast   Ki   Shokhi

Jab   Kisi   Paarsaa   Say   Larrti   Hay

 ZAUQ   Dunya   Hay   Makr   Ka   Maindaan

Nigah   Iss    Ki   Dhagaa   Say   Larrti   Hay

 Poet: Ibrahim  Zauq

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -