کل بھی تلاشِ رزق میں گزرا تمام دِن | بیدل حیدری |

کل بھی تلاشِ رزق میں گزرا تمام دِن | بیدل حیدری |
کل بھی تلاشِ رزق میں گزرا تمام دِن | بیدل حیدری |

  

کل بھی تلاشِ رزق میں گزرا تمام دِن

اُڑتا پھرا فضا میں پرندہ تمام دِن

سوچا تھا اپنے سائے کو دیکھوں تو اوڑھ کر

سورج نے مجھ پہ غصہ اُتارا تمام دِن

تنہائی کا خیال قریب آتا کس لیے

میں اپنا خود شریکِ سفر تھا تمام دِن

وہ لو چلی کہ حبس کو ترجیح دی گئی

کھولا نہیں کسی نے دریچہ تمام دِن

تصویرِِ یار پر نہ پڑی غیر کی نظر

سورج کو اپنی جیب میں رکھا تمام دِن

بیدلؔ مری زباں مرے ہونٹوں پہ دیکھ کر

روتا پھرا اِک اَبر کا ٹکڑا تمام دِن

شاعر : بیدل حیدری

(شعری مجموعہ:پشت پہ گھر  )

Kall   Bhi   Talaash-e- Rizq   Men   Guzra   Tamaam   Din

Urrta   Phira   Faza   Men   Parinda    Tamaam   Din

Socha   Tha   Apnay   Saaey   Ko   Dekhun   Aorrh   Kar

Sooraj   Nay   Mujh   Pe   Ghussa   Utaara   Tamaam   Din

Tanhaai   Ka   Khayaal   Qareeb   Aata   Kiss   Liay

Main   Apna   Khud   Shareek -e-Safar   Tha  Tamaam   Din

Wo    Lo   Chali   Keh   Habs   Ko   Tarjeeh   Di   Gai

Khola   Nahen   Kis   Nay   Dareecha   Tamaam   Din

Tasveer -e- Yaar   Par   Na   Parri   Ghair   Ki   Nazar

Sooraj   Ko   Apni   Jaib   Men   Rakha  Tamaam   Din

BEDIL   Miri   Zubaan   Miray   Honton   Pe   Dekh   Kar

Rota   Phira   Ik   Abr   Ka   Tukrra  Tamaam   Din

Poet: Bedil   Haidri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -