دن بھر تو بچوں کی خاطر میں مزدوری کرتا ہوں | تنویر سپرا |

دن بھر تو بچوں کی خاطر میں مزدوری کرتا ہوں | تنویر سپرا |
دن بھر تو بچوں کی خاطر میں مزدوری کرتا ہوں | تنویر سپرا |

  

دن بھر تو بچوں کی خاطر میں مزدوری کرتا ہوں

شَب کو اپنی غیر مکمل غزلیں پوری کرتا ہوں

میری گمنامی کا موجب اُن لوگوں کی شہرت ہے

اپنے تن، من، دَھن سے جن کی میں مشہوری کرتا ہوں

تم اپنے اِن زہر بھرے پیالوں پر جتنے نازاں ہو

میں رَسمِ سُقراط پہ اِتنی ہی مغروری کرتا ہوں

کل تک ممکن ہے میں بھی بھرپور بغاوت کر بیٹھوں

آج اگرچہ شِکوے باطرزِ جمہوری کرتا ہوں

آج بھی سپراؔ اس کی خوشبو مل مالک لے جاتا ہے

میں لوہے کی ناف سے پیدا جو کستوری کرتا ہوں

شاعرہ:  تنویر سپرا​

(شعری مجموعہ:لفظ کھردرے سالِ اشاعت،1980)

Din   Raat   To   Bachon   Ki   Khaatir   Main   Mazdoori   Karta   Hun

Shab   Ko   Apni   Ghair   Mukammal   Ghazlen   Poori   Karta   Hun

Meri   Gumnaami   Ka   Mojib   Un   Logon   Ki   Shohrat   Hay

Apnay Tan   Man   Dhan   Say   Jin   Ki   Main   Mashoori   Karta   Hun

Tum   Apnay   In   Zehr   Bharay   Payaalon   Par   Jitnay   Nazaan   Ho

Main   Rasm-e-Suqraat   Pe   Utni   Hi   Maghroori   Karta   Hun

Kall   Tak   Mumkin   Hay   Main   Bhi   Bharpoor   Baghaawat   Kar   Baithun

Aaj   Agarcheh   Shikway   Ba   Tarz-e-Jamhoori   Karta   Hun

Aaj   Bhi   SIPRA   Uss   Ki   Khushboo   Mill   Malik   Lay   Jaata   Hay

Main   Lohay   Ki   Naaf    Say   Paida   Jo   Kastooori   Karta   Hun

Poet: Tanveer   Sipra

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -مزاحیہ شاعری -