جس سمت بھی دیکھوں نظر آتا ہے کہ تم ہو

جس سمت بھی دیکھوں نظر آتا ہے کہ تم ہو
جس سمت بھی دیکھوں نظر آتا ہے کہ تم ہو

  

جس سمت بھی دیکھوں نظر آتا ہے کہ تم ہو

اے جانِ جہاں یہ کوئی تم سا ہے کہ تم ہو

یہ خواب ہے، خوشبو ہے، کہ جھونکا ہےکہ پل ہے

یہ دھند ہے، بادل ہے، کہ سایا ہے کہ تم ہو

اس دید کی ساعت میں کئی رنگ ہے لرزاں

میں ہوں کہ کوئی اور ہے، دُنیا ہے کہ تم ہو

دیکھو یہ کسی اور کی آنکھیں ہیں کہ میری

دیکھوں یہ کسی اور کا چہرہ ہے کہ تم ہو

یہ عمرِ گریزاں کہیں ٹھہرے تو یہ جانوں

ہر سانس میں مجھ کو یہ لگتا ہے کہ تم ہو

ہر بزم میں موضوعِ سخن دل زدگاں کا

اب کون ہےشیریں ہے کہ لیلا ہے کہ تم ہو

اک درد کا پھیلا ہوا صحرا ہے کہ میں ہوں

اک موج میں آیا ہوا دریا ہے کہ تم ہو

وہ وقت نہ آئے کہ دلِ زار بھی سوچے

اس شہر میں تنہا کوئی ہم سا ہے کہ تم ہو

آباد ہم آشفتہ سروں سے نہیں مقتل

یہ رسم بھی شہر میں زندہ ہے کہ تم ہو

اے جانِ فراز اتنی بھی توفیق کسے تھی

ہم کو غمِ ہستی بھی گوارا ہے کہ تم ہو

شاعر: احمد فراز

                                  Jiss Samat Bhi Dekhun Nazar Aata Hay Keh Tum Ho

                                                Ay Jaan  e  Jaan Yeh Koi Tum Sa Hay Keh Tum Ho

Yeh Khaab Hay , Khushbu Hay Keh Jhonka Hay Keh Pall Hay

               Yeh Dhund hay , Baadal Hay Keh Saaya Hay Keh Tum Ho

                                                               Iss Deed Ki Saat Men Kai Rang Hen Larzaan

                           Main Hun Keh Koi Aor Hay, Dunya Hay Keh Tum Ho

                                                 Dekho Yeh Kisi Aor Ki Aankhen Hen Keh Meri

                                    Dekhun Yeh Kisi Aor Ka Chehra Hay Keh Tum Ho

                             Yeh Umr  e  Gurezaan Kahen Thehray To Yeh Jaanun

                   Har Saans Men Mujh Ko Yahi LAgta Hay Keh Tum Ho

                                            Har Bazm Men Mozu  e  Sukhan Dil zadgaan Ka

                        Ab Kon Hay Sheren Hay Keh Laila Hay Keh Tum Ho

                                         Ik Dard Ka Phaila Hua Sehra Hay Keh Main Hun

https://dailypakistan.com.pk/20-Sep-2020/1186449

                                          Ik Maoj Men Aaya Hua Darya Hay Keh Tum Ho

                                                  Wo Waqt Na Aaey Keh Dil  e  Zaar Bhi Sochay

                           Iss Shehr Men Tanha Koi Ham Sa Hay Keh Tum Ho

                                               Abaad Ham Ashufa Saron Say Nahen Maqtal  

                       Yeh Rasm Abhi Shehr Men Zinda Hay Keh Tum Ho

                                            Aey Jaan  e  FARAZ Itni Bhi Tofeeq Kisay Thi

          Ham Ko Gham  e  Hasti Bhi Gawaara Hay Keh Tum Ho

Poet: Ahmad Faraz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -