تھائی پارلیمنٹ نے سابق وزیرِ اعظم ینگ لک شیناوترا کے مواخذے کی منظوری دے دی

تھائی پارلیمنٹ نے سابق وزیرِ اعظم ینگ لک شیناوترا کے مواخذے کی منظوری دے دی
تھائی پارلیمنٹ نے سابق وزیرِ اعظم ینگ لک شیناوترا کے مواخذے کی منظوری دے دی

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

بنکاک (مانیٹرنگ ڈیسک) تھائی لینڈ کی پارلیمنٹ نے سابق وزیرِ اعظم ینگ لک شیناوترا کے مواخذے کی منظوری دے دی ہے جس کے بعد وہ ملکی سیاست میں پانچ برس تک حصہ نہیں لے سکیں گی۔

سابق وزیرِ اعظم کے مواخذے کے لیے فوج کی حمایت یافتہ اسمبلی کے 220 ارکان میں سے 132 کی حمایت درکار تھی اور جمعہ کو ہونیوالی ووٹنگ کے دوران 190 ارکان نے مواخذے کے حق میں جبکہ 18 نے مخالفت میں ووٹ دیا جبکہ آٹھ نے اپنا حقِ رائے دہی استعمال نہیں کیا۔

ان کا مواخذہ چاولوں کی متنازع سبسڈی سکیم میں بطور وزیرِ اعظم ان کے کردار پر کیا گیا ہے جبکہ ناقدین کا کہنا ہے کہ اس منصوبے کی وجہ سے حکومت کو اربوں روپے کا نقصان ہوا۔

مواخذے کی منظوری سے قبل تھائی لینڈ کے اٹارنی جنرل کے دفتر کے مطابق ینگ لک شیناوترا پر چاولوں کی زیادہ قیمت پر خریداری کے معاملے میں فوجداری مقدمہ چلانے کا اعلان کیا تھا۔

یادرہے کہ ینگ لک شیناوترا کو مئی 2014 میں فوجی بغاوت سے قبل وزارتِ عظمیٰ چھوڑنی پڑی تھی اور ان کے حامیوں کا کہنا ہے کہ ینگ لک پر عائد کیے جانے والے الزامات ان کا سیاسی کریئر ختم کرنے کی سازش کا حصہ ہیں۔

مزید : بین الاقوامی