اہلِ دل ، اہلِ خرد ، اہلِ نظر سب سو گئے | حمایت علی شاعر |

اہلِ دل ، اہلِ خرد ، اہلِ نظر سب سو گئے | حمایت علی شاعر |
اہلِ دل ، اہلِ خرد ، اہلِ نظر سب سو گئے | حمایت علی شاعر |

  

اہلِ دل ، اہلِ خرد  ، اہلِ نظر سب سو گئے 

سب کو بیداری کا دعویٰ تھا مگر سب سو گئے

صبح کی خاطر رہے جو رات بھر مشعل بکف

ایسی نیند آئی کہ ہنگامِ سحر سب سو گئے

اس کو کیا کہیے کہ احساسِ زیاں کے باوجود

راستے میں راہروان و   راہبر سب سو گئے

کارواں خطرے میں ہے کچھ دیر میں ہی جاگ لوں

کون اس کا پاسباں ہو گا اگر سب سو گئے

اس جگہ پر رہزنوں کا خوف پہلے ہی سے تھا

لاکھ چلاتا رہا شاعر مگر سب سو گئے

شاعر: حمایت علی شاعر

 (شعری مجموعہ: آگ میں پھول؛سال اشاعت،1956)

Ehl-e-Dil   ,   Ehl-e-Khirad  ,  Ehl-e-Nazar   Sab   So   Gaey

Sab   Ko   Bedaari    Ka    Daawa   Tha    Magar   Sab   So   Gaey

Subh   Ki   Khaatir   Rahay   Jo   Raat   Bhar   Mashal   Bakaff

Aisi   Neend   Aai   Keh   Hangaam-e-Sahar   Sab   So   Gaey

Iss   Ko   Kaya   Kahiay   Keh   Ehsaas-e-Ziyaan   K   Bawajood

Raastay   Men    Rahrawaan-o-Raahbar   Sab   So   Gaey

Kaarwaan   Khatray    Men   Hay   Kuch   Der   Men   Hi    Jaag   Lun

Kon   Iss   Ka   Paasbaan    Ho   Ga   Agar    Sab   So   Gaey

Iss    Jagah   Par   Rehzano   Ka    Khaof     Pehlay   Say   Hi    tha

Laakh   Chillaata   Raha   Shayar    Magar   Sab   So   Gaey

Poet: Himayat   Ali   Shayar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -