صدائیں دیتے ہوئے اور خاک اڑاتے ہوئے | رحمان فارس |

صدائیں دیتے ہوئے اور خاک اڑاتے ہوئے | رحمان فارس |
صدائیں دیتے ہوئے اور خاک اڑاتے ہوئے | رحمان فارس |

  

صدائیں دیتے ہوئے اور خاک اڑاتے ہوئے 

میں اپنے آپ سے گزرا ہوں تجھ تک آتے ہوئے 

پھر اس کے بعد زمانے نے مجھ کو روند دیا 

میں گر پڑا تھا کسی اور کو اٹھاتے ہوئے 

کہانی ختم ہوئی اور ایسی ختم ہوئی 

کہ لوگ رونے لگے تالیاں بجاتے ہوئے 

پھر اس کے بعد عطا ہو گئی مجھے تاثیر 

میں رو پڑا تھا کسی کو غزل سناتے ہوئے 

خریدنا ہے تو دل کو خرید لے فوراً 

کھلونے ٹوٹ بھی جاتے ہیں آزماتے ہوئے 

تمہارا غم بھی کسی طفلِ شیرخار سا ہے 

کہ اونگھ جاتا ہوں میں خود اسے سلاتے ہوئے 

اگر ملے بھی تو ملتا ہے راہ میں فارسؔ 

کہیں سے آتے ہوئے یا کہیں کو جاتے ہوئے 

شاعر: رحمان فارس

(شعری مجموعہ:عشق بخیر؛سالِ اشاعت،2018)

Sadaaen    Detay   Huay    Aor    Khaak    Urraatay   Huay

Main   Apnay   Aap   Say    Guzra   Hun   Tujh    Tak   Aatay   Huay

Phir   Iss    K    Baad   Zamaanay   Nay   Mujh   Ko   Raond   Diya

Main   Gir    Parra   Tha   Kisi   Aor   Ko   Uthaatay   Huay

Kahaani    Khatm    Hui    Aor    Aisi    Khatm   Hui

Keh   Log   Ronay     Lagay   Taaliyaan    Bajaatay    Huay

Phir    Iss    K    Baad    Ataa    Ho    Gai    Mujhay   Taseer

Main    Ro    Parra   Tha    Kisi    Ko   Ghazal    Sunaatay   Huay

Kahreedna    Hay   To    Dil   Ko    Khareed    Lay   Foran

Khilonay   Toot    Bhi    Jaatay    Hen    Aazmaatay    Huay

Tumhaara    Gham    Bhi    Tifl-e-Sheer    Khaar    Sa   Hay

Keh    Oongh    Jaata      Hun    Main    Khud    Isay    Sulaatay   Huay

Agar    Milay    Bhi    To    Milta     Hay     Raah    Men   FARIS

Kahen    Say    Aatay    Huay   Ya    Kahen    Ko    Jaatay   Huay

Poet: Rehman     Faris

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -