ہے عجب حال یہ زمانے کا​

ہے عجب حال یہ زمانے کا​
ہے عجب حال یہ زمانے کا​

  

ہے عجب حال یہ زمانے کا​

یاد بھی طور ہے بھُلانے کا

پسند آیا  بہت  ہمیں پیشہ​

خود ہی اپنے گھروں کو ڈھانے کا​

کاش ہم کو بھی ہو نصیب کبھی​

عیش دفتر میں گنگنانے کا​

آسمانِ خموشیِ جاوید​

میں بھی اب لب نہیں ہلانے کا​

جان! کیا اب ترا پیالۂ ناف​

نشہ مجھ کو نہیں پِلانے کا​

شوق ہے ِاس دل درندہ کو​

آپ کے ہونٹ کاٹ کھانے کا​

اتنا نادم ہوا ہوں خود سے کہ میں​

اب نہیں خود کو آزمانے کا​

کیا کہوں جان کو بچانے میں​

جونؔ خطرہ ہے جان جانے کا​

یہ جہاں جون! اک جہنم ہے​

یاں خدا بھی نہیں ہے آنے کا​

زندگی ایک فن ہے لمحوں کا​

اپنے انداز سے گنوانے کا​

شاعر: جون ایلیا

Hay Ajab Haal Yeh Zamaanay Ka

Yaad Bhi Tor Hay Bhulaanay ka

Pasand Aaya Bahut Hamen  Paisha

Khud Hi Apnay Ghar Ko Dhaanay Ka

Kaash Ham Ko Bhi Ho naseeb Kabhi

Aish Daftar Men Gunganaanay Ka

Aasmaan  e  Khamoshi  e  Javed

Main Bhi Ab Lab Nahen Hilaanay Ka

Jaan! Kia Ab Tira Payaala  e  Naaf

Nasha Mujh Ko Nahen Pilaanay Ka

Shoq Hay Iss Dil Darinda Ko

Aap K Hont Kaat Khaanay Ka

Itna Naadam Hua Hun Khud Say Keh Main

Ab Nahen Khud Ko Aazmaanay Ka

Kia Kahun Jaan Ko bachaanay Men 

JAUN Khatra Hay Jaan Jaanay Ka

Yeh Jahaan JAUN Ik Jahannam Hay

Yaan Khuda Bhi Nahen Hay Aanay Ka

Zindagi Aik Fan Hay  Lamhon Ko 

Apnay Andaaz Say Ganwaanay ka

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -