عالم ہے زندگی میں زمانہ شباب کا

عالم ہے زندگی میں زمانہ شباب کا
عالم ہے زندگی میں زمانہ شباب کا

  

عالم ہے زندگی میں زمانہ شباب کا

گلشن میں برگ برگ ہے پھول آفتاب کا

جلوہ ہو کیونکہ خاک پہ تابِ غناب کا

جلتا نہیں ہےبرقِ سرو آنِ سحاب کا

اے گلرخو نہ چھیڑنا دامن سحاب کا

دیکھو چھلک رہا ہے کٹورا گلاب کا

اُس گُل بغیر طوطئی بسمل سے کم نہیں

سبزۂ مزار عاشق پُر اضطراب کا

صد پارہ دل ہے گنجفہِ عشق ہو گیا

اور ہر ورق پہ نقش ہے حکم آفتاب کا

ہے دل جلوں کے واسطے نامہ بر تو خوف

اڑنا مگر محال ہے مرغِ کباب کا

ٹپکے اگر عرقِ گل رخسار سے ترے

دریا میں ہر حباب ہو شیشہ گلاب کا

اے آفاتب! تیرے رُخ تاب ناک سے

کیا کای چمک رہا ہے ستارہ حباب کا

ہوتا ہے دل جلوں سے کہیں ذوقؔ ضبطِ آہ

موجِ دخاں سے ضبط نہ ہو پیچ و تاب کا

شاعر: ابراہیم ذوق

(دیوانِ ذوق:مرتبہ انوارلحسن صدیقی؛سنِ اشاعت1957)

Aalam Hay Zindagi Men Zamaana Shabaab Ka

Gulshan Men Barg Barg Hay Phool Aaftaab Ka

 Jalwa Ho Kiun Keh Khaak Pe Taab e Utaab Ka

Jalta Nahen Hay Barq Say Daaman Sahaab Ka 

Ay Gular Khu Na Chairrna Daaman Sahaab Ka

Dekho Chalak Rah Hay Kattora Gulab Ka 

Iss Gull Baghair Tooti e Bismil Say Kam nahen

 Sabza e  Mazaar e Aashiq e Pur Iztaraab ka

Sad Paar Dil Hay Ganfaa e Eshq Ho Gaya

Aor Har Waraq Pe Naqsh Hay Hukm Aaftaab Ka 

Hay Dil Jalon K Waastay Yeh Naama BarTo Khoob

Urrna Magar Muhaal Hay Murgh e Kabaab Ka

Tapkay Agar Araq e Gull Rukhsaar Say Tiray

Darya Men Har Hubaab Ho Sheesha Gulaab Ka

Ay AftaabTeray Rukh e Taabnaak Say

Kay Kay Chamak Rah Hay Sitaara Hubaab Ka

Hota Hay Dil Jalon Say Kahen ZAUQ Zabt  e Aah

Moj Dukhaan Say Zabt Na Ho Paich o Taab ka

Poet: Ibrahin Zauq

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -