تیرے چہرے کی طرح اور میرے سینے کی طرح | مصطفیٰ زیدی|

تیرے چہرے کی طرح اور میرے سینے کی طرح | مصطفیٰ زیدی|
تیرے چہرے کی طرح اور میرے سینے کی طرح | مصطفیٰ زیدی|

  

تیرے چہرے کی طرح اور مرے سینے کی طرح 

میرا ہر شعر دمکتا ہے نگینے کی طرح 

پھول جاگے ہیں کہیں تیرے بدن کی مانند

اوس مہکی ہے کہیں تیرے پسینے کی طرح 

اے مجھے چھوڑ کے طوفان میں جانے والی 

دوست ہوتا ہے طلاطم میں سفینے کی طرح 

اے مرے غم کو زمانے سے بتانے والی 

میں ترا راز چھپاتا ہوں دفینے کی طرح 

تیرا وعدہ تھا کہ اس ماہ ضرور آئے گی 

اب تو ہر روز گزرتا ہے مہینے کی طرح

شاعر: مصطفیٰ زیدی

  

(شعری مجموعہ:گریباں)

Teray   Chehray   Ki   Tarah   Aor   Meray   Seenay   Ki   Tarah

Mera   Har   Sher   Damakta   Hay   Nageenay   Ki   Tarah

 Phool    Jaagay    Hen   Kahen   Teray   Badan   Ki   Maanind

Aos   Mehki   Hay   Kahen   Teray   Paseenay   Ki   Tarah

 Ay   Mujhay   Chorr   K   Tufaan   Men   Jaanay   Waali

Dost   Hota   Hay   Talaatum    Men   Safeenay   Ki   Tarah

 Ay    Miray   Gham   Ko   Zamaanay   Say   Bataanay   Waali

Main   Tira   Raaz   Chhupaata   Hun    Dafeenay   Ki   Tarah

 Tera   Waada   Tha    Keh    Iss   Maah    Zaroor   Aaey   Gi

Ab   To   Har    Roz   Guzrta   Hay   Maheenay   Ki   Tarah

Poet: Mustafa    Zaidi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -