لغزش | اختر الایمان |

لغزش | اختر الایمان |
لغزش | اختر الایمان |

  

لغزش

جھلملا کر بجھ گئے پاگل امیدوں کے دیے

تو سمجھتی ہے کہ میں ہو ں آج تک اندوہ گیں

وقت کے ہاتھوں نے آخر مندمل کر ہی دیا

اب مرے معصوم زخموں سے لہو بہتا نہیں 

جب حنائی انگلیوں کی جنبشیں آتی ہیں یاد

جذب کر لیتا ہوں آنکھوں میں لہو کی بوند سی

اب مگر ماضی کی ہر شے پر اندھیرا چھا گیا

اور ہی راہوں سے گزری جارہی ہے زندگی

ذہن میں ابھرے ہوئے چند بے جاں سے نقوش

اور ان میں بھی نہیں ہے کوئی ربطِ باہمی

خواب دیکھا تھا کسی دامن کی چھاؤں میں کبھی

ایک ایسا خواب جس کا مدعا کوئی نہیں

میں اکیلا جا رہا ہوں اور زمیں ہے سنگلاخ

اجنبی وادی میں میرا آشنا کوئی نہیں

راستے کٹتے ہوئے گم ہوگئے ہیں دھند میں

دھند سے آگے خلا ہے راستا کوئی نہیں

یہ بھیانک خواب کیوں مغلوب کرتے ہیں مجھے

دودھیا راتیں سحر کے جھٹپٹے میں کھو گئیں

ٓاور تیری نرم باہیں ، مجھ سے اب ناآشنا

اور ہی گردن کے حلقے میں لپٹ کر سو گئیں

مسکرا اٹھتا ہوں اپنی سادگی پر میں کبھی

کس قدر تیزی سے یہ باتیں پرانی ہو گئیں

شاعر: اخترالایمان

(شعری مجموعہ:گرداب،سالِ اشاعت1943)  

Laghzish

Jhilmila     Kar    Bujh    Gaey    Pagal    Umeedon    K    Diay

Tu    Samajhti    Hay    Keh    Main    Hun    Aaj    Tak    Andoh    Geen

Waqt    K    Haathon    Nay    Aakhir    Mundamill    Kar    Hi    Daya

Ab    Miray     Masoom     Zakhmon    Say    Lahu    Behta    Nahen

Jab     Hinaai     Ungalion    Ki    Junbashen    Aati    Hen   Yaad

Jazb    Kar    Leta    Hun   Aankhon    Men    Lahu    Ki    Boond    Si

Ab    Magar    Maazi    Ki    Har    Shay    Par    Andhiara   Sa    Chhaa    Gaya

Aor    Hi    Raahon    Say    Guzri    Jaa    Rahi    Hay    Zindagi

Zehm    Men    Ubhray    Huay    Hen     Chand    Bejaan    Say    Naqoosh

Aor    Un    Men    Bhi    Nahen    Hay    Koi    Rabt - e - Baahami

Khaab    Dekha    Tha    Kisi     Daaman    Ki    Chhaaon   Men    Kabhi

Aik     Aisa     Khaab    Jiss    Ka    Mudaa    Koi    Nahen

Main    Akaila    Ja    Raha    Hun    Aor    Zameen     Hay   Sanglaakh

Ajnabi    Wadi    Men    Mera    Aashna    Koi   Nahen

Raastay    Kattay    Huay    Gum    Ho    Gaey    Hen    Dhund    Men

Dhund   Say    Aagay    Khalaa    Hay    Raasta    Koi    Nahen

Yeh    Bhayanak    Khaab    Kiun    Maghloob    Kartay    Hen    Mujhay

Dodhya     Raaten    Sahar    K    Jhatpatay    Men    Kho    Gaen

Aor     Teri    Narm    Baahen   ,    Mujh     Say    Ab    Na    Aaashna

Aor    Hi    Gardan    K   Halqay    Men    Lipat    Kar    So   Gaen

Muskaraa    Uthta    Hun    Apni    Saadgi    Par    Main    Kabhi

Kiss    Qadar     Tezi    Say    Yeh    Baaten    Puraani    Ho    Gaey

Poet: Akhtar    ul    Eman

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -