سچ کو زہر کہتے ہیں | ادا جعفری |

سچ کو زہر کہتے ہیں | ادا جعفری |
سچ کو زہر کہتے ہیں | ادا جعفری |

  

سچ کو زہر کہتے ہیں

زہرپی لیا ہم نے

راہ میں کہا ں چھوڑا

دل سا رہنما ہم نے

تنگ و تیرہ گلیوں میں

شہر کھو دیا ہم نے

ظرف اپنا اپنا ہے

منہ سے کچھ کہا ہم نے

خواب دل کا سرمایہ 

اور لٹا دیا ہم نے

ہٹ گئے ہیں رستے سے

کچھ کہا سنا ہم نے

یاد آنے والوں کا

نام بھی لیا ہم نے

دیکھنے کو دیکھا تھا

کوئی خواب سا ہم نے

برگِ گل سے کیوں پوچھا

گھر کا راستہ ہم نے

کر لیا ہے کس دل سے

اپنا سامنا ہم نے

شاعر: ادا جعفری

(شعری مجموعہ:شہرِ درد،سالِ اشاعتِ دوم،1982)  

Sach   Ko    Zehr   Kehtay   Hen

Zehr   Pi   Liya   Ham    Nay

Raah   Men   Kahan   Chhorra

Dil   Sa   Rehnuma    Ham   Nay

Tang-o-Teera    Galiyon    Men

Shehr    Kho    Diya    Ham   Nay

Zarf    Apna    Apna    Hay

Munh    Say    Kuch    Kaha   Ham   Nay

Khaab    Dil    Ka    Sarmaaya

Aor    Luta    Diya    Ham   Nay

Hatt    Gaey    Hen    Rastay    Say

Kuch     Kaha    Suna   Ham    Nay

Yaad      Aanay     Waalon    Ka 

Naam    Bhi    Liya   Ham   Nay

Dekhnay    Ko    Dekha   Tha

Koi    Khaab    Sa    Ham   Nay

Barg -e- Gull    Say    Kiun    Poocha

Ghar    Ka    Raasta    Ham    Nay

Kar     Liya    Hay    Kiss    Dil    Say

Apna    Saamna    Ham    Nay

Poetess:Ada Jafri

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -