حسابِ عمر کا اتنا سا گوشوارا ہے | امجد اسلام امجد|

حسابِ عمر کا اتنا سا گوشوارا ہے | امجد اسلام امجد|
حسابِ عمر کا اتنا سا گوشوارا ہے | امجد اسلام امجد|

  

حسابِ عمر کا اتنا سا گوشوارا ہے

تمہیں نکال کے دیکھا تو سب خسارا ہے

کسی چراغ میں ہم ہیں کسی کنول میں ہو تم

کہیں جمال ہمارا کہیں تمہارا ہے

وہ کیا وصال کا لمحہ تھا جس کے نشے میں

تمام عمر کی فرقت ہمیں گوارا ہے

ہر اک صدا جو ہمیں بازگشت لگتی ہے

نجانے ہم ہیں دوبارہ کہ یہ دوبارہ ہے

وہ منکشف مری آنکھوں میں ہو کہ جلوے میں

ہر ایک حسن کسی حسن کا اشارہ ہے

عجب اصول ہیں اس کاروبارِ دُنیا کے

کسی کا قرض کسی اور نے اُتارا ہے

کہیں پہ ہے کوئی خوشبو  کہ جس کے ہونے کا

تمام عالمِ موجود استعارا ہے

نجانے کب تھا! کہاں تھا مگر یہ لگتا ہے

یہ وقت پہلے بھی ہم نے کبھی گزارا ہے

یہ دو کنارے تو دریا کے ہو گئے ، ہم تم

مگر وہ کون ہے جو تیسرا کنارا ہے​

شاعر: امجد اسلام امجد

(شعری مجموعہ:پسِ گفتگو )

Hisab -e-Umr   Ka    Itna    Sa    Goshwaara   Hay

Tumhem   Nikaal    K   Dekha   To   Sab   Khasaara   Hay

Kisi   Charaagh   Men   Ham   Hen  ,   Kisi   Kanwal   Men  Tum

Kahen   Jamaal   Hamaara   Kahen    Tumhaara   Hay

Wo  Kaya   Visaal   Ka   Lamha   Tha   Jiss   K   Nashay   Men

Tamaam   Umr   Ki Furqat   Hamen   Gawaara   Hay

Har   Ik  Sada   Jo   Hamen   Baazgasht   Lagti   Hay

Najaanay   Ham   Hen   Dubaara   Keh   Yeh   Dubaara   Hay

Wo   Munkashif   Miri   Aankhon   Men   Ho   Keh   Jalway   Men

Har   Aik    Husn   Kisi   Husn   Ka   Ishaara   Hay

Ajab   Usool   Hen   Iss   Karobaar -e- Dunya   K

Kisi   Ka   Qarz   Kisi   Aor   Nay   Utaara   Hay

Kahen   Pe   Hay   Koi   Khushbu   Keh   Jiss   K   Honay   Ka

Tamaam    Aalam -e- Maojood   Isteaara   Hay

Najanay   Kab   Tha  ,  Kahan   Tha   Magar   Yeh  Lagta   Hay

Yeh   Waqt   Pehlay   Bhi   Ham   Nay   Kabhi   Guzaara   Hay

Yeh   Do   Kinaaray   To   Darya   K   Ho   Gaey  ,   Ham   Tum

Magar   Yeh   Kon   Hay   Jo   Teesra   Kinaara    Hay

Poet: Amjad   Islam   Amjad

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -