معروف شاعر عرش ملسیانی کا یومِ وفات(15دسمبر)

معروف شاعر عرش ملسیانی کا یومِ وفات(15دسمبر)
معروف شاعر عرش ملسیانی کا یومِ وفات(15دسمبر)

  

عرش ملسیانی:

عرش کی پیدائش  20ستمبر 1908ء کو جالندھر کے ایک چھوٹے سے قصبے ملسیان میں ہوئی۔ ان  کا نام بالم کند تھااور عرش ملسیانی کے نام سے مشہور ہوئے۔ان کے والد جوش ملسیانی بھی ایک ممتاز شاعر تھے اور داغ دہلوی کے شاگرد تھے۔عرش پیشے سے انجینئر تھے اور محکمۂ نہر سے وابستہ رہے۔ اس کے بعد لدھیانہ کے صنعتی اسکول میں ملازم ہوگئے اور یہیں سے گریجویشن کیا۔ 1942 میں دہلی آگئے اور 1948 میں پبلی کیشنز ڈویژن کے ادبی رسالے ’’آج اور کل‘‘ کے نائب مدیر مقرر ہوئے۔ تقریباً سات سال جوش ملیح آبادی کے رفیق کار رہے، جوش کے پاکستان چلے جانے کے بعد ان کی جگہ ’’آج اور کل‘‘ کے ایڈیٹر مقرر ہوئے۔ 15دسمبر 1979ء کو دہلی میں انتقال کر گئے۔ 

نمونۂ کلام

حسینوں کے ستم کو مہربانی کون کہتا ہے 

عداوت کو محبت کی نشانی کون کہتا ہے 

یہاں ہر دم نئے جلوے یہاں ہر دم نئے منظر 

یہ دنیا ہے نئی اس کو پرانی کون کہتا ہے 

تجھے جس کا نشہ ہر دم لیے پھرتا ہے جنت میں 

بتا اے شیخ اس کوثر کو پانی کون کہتا ہے 

بلا ہے، قہر ہے، آفت ہے، فتنہ ہے قیامت کا 

حسینوں کی جوانی کو جوانی کون کہتا ہے 

ہزاروں رنج اس میں عرشؔ لاکھوں کلفتیں اس میں 

محبت کو سرودِ  زندگانی کون کہتا ہے

شاعر: عرش ملسیانی

 Haseenon   K   Sitam   Ko   Mehrbaani   Kon   Kehta   Hay

Adaawat   Ko   Muhabbat   Ki   Nishaani   Kon   Kehta   Hay

 Yahan   Har   Dam  Naey   Jalway   Yahan   Har   Dam   Naey   Manzar

Yeh   Dunya   Hay   Nai   Iss   Ko   Puraani   Kon   Kehta   Hay

 Tujhay   Jiss   Ka   Nasha   Har   Dam   Liay   Phirta   Hay   Jannat   Men

Bataa   Ay   Shaikh   Iss   Ko   Kousar   Ka   Paani   Kon   Kehta   Hay

 Balaa   Hay  ,   Qehr   Hay  ,   Aafat   Hay ,   Fitna   Hay   Qayaamat   Ka

Haseenon   Ki   Jawaani    Ko   Jawaani   Kon   Kehta   Hay

 

Hazaaron   Ranj   Iss   Men   ARSH    Laakhon   Kalaften   Iss   Men

Muhabbat   Ko   Sarood-e-Zindgaani   Kon   Kehta   Hay

 Poet: Arsh   Malsiyani

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -