گھر میں رہتے ہوئے غیروں کی طرح ہوتی ہیں|منور رانا |

گھر میں رہتے ہوئے غیروں کی طرح ہوتی ہیں|منور رانا |
گھر میں رہتے ہوئے غیروں کی طرح ہوتی ہیں|منور رانا |

  

گھر میں رہتے ہوئے غیروں کی طرح ہوتی ہیں

بیٹیاں دھان کے پودوں کی طرح ہوتی ہیں

اڑ کے اک روز بڑی دور چلی جاتی ہیں

گھر کی شاخوں پہ یہ چڑیوں کی طرح ہوتی ہیں

سہمی سہمی ہوئی رہتی ہیں مکانِ دل میں

آرزوئیں بھی غریبوں کی طرح ہوتی ہیں

ٹوٹ کر یہ بھی بکھر جاتی ہیں اک لمحے میں

کچھ امیدیں بھی گھروندوں کی طرح ہوتی ہیں

آپ کو دیکھ کے جس وقت پلٹتی ہے نظر

میری آنکھیں، مری آنکھوں کی طرح ہوتی ہیں

باپ کا رتبہ بھی کچھ کم نہیں ہوتا، لیکن

جتنی مائیں ہیں فرشتوں کی طرح ہوتی ہیں

شاعر: منوررانا

(شعری مجموعہ: جنگلی پھول؛سالِ اشاعت،2007)

Ghar   Men   Rehtay   Huay   Ghairon   Ki   Tarah    Hoti   Hen

Baitiyaan   Dhaan   K   Paodon   Ki   Tarah    Hoti   Hen

 Urr   K   Ik   Roz    Barri   Door   Chali   Jaati   Hen

Ghar   Ki   Shaakhon   Pe   Yeh   Chirrion   Ki   Tarah    Hoti   Hen

 Sehmi   Sehmi   Hui   Rehti   Hen   Makaan-e-Dil   Men

Aarzuen   Bhi   Ghareebon   Ki   Tarah    Hoti   Hen

 Toot   K   Yeh   Bhi   Bikhar   Jaati   Hen  Ik   Lamhay  Men

Kuchh   Umeeden   Gharondon   Ki   Tarah    Hoti   Hen

 Aap   Ko   Dekh   K   Jiss   Waqt   Palatti   Hay   Nazar

Meri   Aankhenm   Miri   Aankhon   Ki   Tarah    Hoti   Hen

 Baap   Ka   Rutba   Bhi   Kuchh   Kam   Nahen   Hota  ,  Lekin

Jitni   Maaen   Hen   Farishton   Ki   Tarah    Hoti   Hen

 Poet: Munawwar   Rana

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -