الماری سے خط اُس کے پرانے نکل آئے|منور رانا |

الماری سے خط اُس کے پرانے نکل آئے|منور رانا |
الماری سے خط اُس کے پرانے نکل آئے|منور رانا |

  

الماری سے خط اُس کے پرانے نکل آئے

پھر سے مرے چہرے پہ یہ دانے نکل آئے

ماں بیٹھ کے تکتی تھی جہاں سے مرا رستہ

مٹی کے ہٹاتے ہی خزانے نکل آئے

ممکن ہے ہمیں گاؤں بھی پہچان نہ پائے

بچپن میں ہی ہم گھر سے کمانے نکل آئے

اے ریت کے ذرے ترا احسان بہت ہے

آنکھوں کو بھگونے کے بہانے نکل آئے

اب تیرے بلانے سے بھی ہم آ نہیں سکتے

ہم تجھ سے بہت آگے زمانے نکل آئے

ایک خوف سا رہتا ہے مرے دل میں ہمیشہ

کس گھر سے تری یاد نہ جانے نکل آئے

شاعر: منور رانا

(شعری مجموعہ: جنگلی پھول؛سالِ اشاعت،2007)

Almaari   Pe    Khat   Uss   K   Puraanay   Nikall   Aaey

Phir   Say   Miray   Chehray    Pe   Yeh   Daanay   Nikall   Aaey

 Maan   Baith   K   Takti   Thi   Jahan   Say    Mira   Rasta

Matti   K   Hattaatay   Hi   Khazaanay   Nikall   Aaey

 Mumkin   Hay   Hamen   Gaaon   Bhi   Pehchaan   Na   Paaey

Bachpan   Men   Hi   Ham   Ghar   Say   Kamaanay   Nikall   Aaey

 Ay   Rait   K   Zarray   Tira    Ehsaan   Bahut   Hay

Aankhon   Ko   Bhigonay   K   Bahaanay   Nikall   Aaey

 Ab   Teray   Bulaanay   Say   Bhi   Ham   Aa   Nahen   Saktay

Ham   Tujh   Say   Bahut   Aagay   Zamaanay   Nikall   Aaey

 Aik   Khaof   Sa   Rehta   Hay   Miray   Dil   Men   Hamesha

Kiss   Ghar   Say   Tiri   Yaad    Na   Jaanay   Nikall   Aaey

 Poet: Munawwar   Rana

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -