تھی وصل میں بھی فکرِ جدائی تمام شب| مومن خان مومن|

 تھی وصل میں بھی فکرِ جدائی تمام شب| مومن خان مومن|
 تھی وصل میں بھی فکرِ جدائی تمام شب| مومن خان مومن|

  

 تھی وصل میں بھی فکرِ جدائی تمام شب

وہ آئے تو بھی نیند نہ آئی تمام شب

رنگیں ہیں خونِ سر سے وہ ہاتھ آج کل رہے

جس ہاتھ میں وہ دستِ حنائی تمام شب

مر جاتے کیوں نہ صبح کے ہوتے ہی ہجر میں

تکلیف کیسی کیسی اُٹھائی تمام شب

کہتا ہے مہروش تمہیں کیوں غیر گر نہیں

دن بھر ہمیشہ وصلِ جدائی تمام شب

دھر پاؤں آستاں پہ کہ اس آرزو میں آہ

کی ہے کسی نے ناصیہ سائی تمام شب

مومنؔ میں اپنے نالوں کے صدقے کہ کہتے ہیں

ان کو بھی آج نیند نہ آئی تمام شب

شاعر: مومن خان مومن

(شعری مجموعہ: دیوانِ مومن؛مرتبہ،انوارالحسن،سالِ اشاعت،1971)

Thi   Wasl   Men   Bhi   Fikr-e-Judaai   Tamaam   Raat

Wo   Aaey   To   Bhi   Neend   Na   Aaai   Tamaam   Raat

 Rangeen   Hen   Khoon  -e-Sar   Say   Wo   Haath   Aaj   Kall   Rahay

Jiss   Haath   Men   Wo   Dast-e-Hinaai   Tamaam   Raat

 Mar    Jaatay   Kiun   Na   Subh    K    Hotay   Hi   Wasl   Men

Takleef    Kaisi   Kaisi   Uthaai   Tamaam   Raat

 Kehta   Hay   Mehrvish   Tumhen   Kiun   Ghair   Gar   Nahen

Din   Bhar   Hamesha  Wasl-e-Judaai   Tamaam   Raat

 Dhar   Paaon   Aastaan   Pe   Keh   Iss   Aarzu   Men   Aah

Ki   Hay   Kiss   Nay   Naasiyah   Saai   Tamaam   Raat

 MOMIN   Main   Apnay   Naalon   K   Sadqay   Keh   Kehtay   Hen

Un    Ko   BHi    Neend   Na   Aai   Tamaam   Raat

 

Poet: Momin    Khan   Momin

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -