زرد چہرہ ہے نحیف و زار ہوں | میر انیس |

زرد چہرہ ہے نحیف و زار ہوں | میر انیس |
زرد چہرہ ہے نحیف و زار ہوں | میر انیس |

  

زرد چہرہ ہے نحیف و زار ہوں

ماتمِ سجاد میں بیمار ہوں

مثلِ بوئے گل سفر ہو گا مرا

وہ نہیں میں جو کسی پر بار ہوں

بلبلیں دم بھر جدا ہوتی نہیں

کس گلِ تر کے گلے کا ہار ہوں

عالمِ پیری میں آئے کون پاس

اے عصا گرتی ہوئی دیوار ہوں

ہر کس و ناکس سے جھکنے کا نہیں

ہمدمو میں تیغِ جوہر دار ہوں

اے زمیں مجھ کو حقارت سے نہ دیکھ

آسماں کا طرّۂ دستار ہوں

شہ کو عرضی میں یہ صغرا نے لکھا

رحم کیجیے طالبِ دیدار ہوں

شام سے گنتی ہوں تارے تا سحر

صورتِ مہتاب شب بیدار ہوں

کہتے تھے عباس اے فوجِ یزید

میں غلامِ سیدِ ابرار ہوں

میرا آقا ہے حسین ابنِ علی

ابنِ زہرا کا علم بردار ہوں

کہتے تھے عابد قدم کیوں کر اٹھیں

اے ستمگارو نحیف و زار ہوں

دم بدم کھینچو نہ میرے ہاتھ کو

پاؤں پڑ سکتے نہیں ناچار ہوں

سوکھ کر کانٹا ہوا ہوں پر انیس

آنکھ میں دشمن کی اب تک خار ہوں

شاعر: میر انیس

(شعری مجموعہ: انیس کے سلام ؛مرتبہ،علی جواد زیدی،سالِ اشاعت،1981)

Zard   Chehra   Hay   Naheef -o-Zaar   Hun

Maatam-e-Sajjad   Men   Bemaar   Hun

 Misl-e-Bu-e-Gull   Safar   Ho   Ga   Mira

Wo   Nahen   Main   Jo   Kisi   Par   Baar   Hun

 Bulbulen   Dam   Bhar   Juda   Hoti   Nahen

Kiss   Gul-e-Tar   K   Galay   Ka   Haar   Hun

Aalam-e-Peeri   Men    Aaey   Kon   Paas

Ay   Asaa   Girti   Hui   Dewaar   Hun

 Har   Kas-o-Naakis   Say   Jhuknay   Ka   Nahen

Hamdamo  ,   Main   Taigh-e-Johar   Daar   Hun

 Ay   Zameen   Mujh   Ko   Haqaarat   Say   Na   Dekh

Aasmaan   Ka   Turra-e-Dastaar   Hun

 SHAH   Ko   Arzi   Men   SUGHRA   Nay   Yeh   Likha

Rehm    Kijiay   Taalib-e-Dedaar   Hun

 Shaam   Say   Ginti   Hun   Taaray   Ta   Sahar

Soorat -e-Mahtaab    Shab   Bedaar   Hun

Kehtay   Thay   ABBAS    Ay   Faoj-e-Yazeed

Main   Ghulam-e-   SAYYED-e-ABRAAR   Hun

 Mera    Aaqa   Hay   HUSSAIN    Ibn-e-ALI

Ibn-e-ZAHRA    Ka   Alam    Bardaar   Hun

 Kehtay   Thay   ABID    Qadam   Kiun    Kar   Uthay

Ay   Sitam   Gaaro    Naheef-o-Zaar   Hun

 

 Dam   Badam     Khaincho   Na    Meray    Haath   Ko

Paaon   Parr    Saktay   Nahen    Nachaar   Hun

 Sookh   Kar   Kaanta   Hua   Hun   Par   ANEES

Aankh   Men   Dushman   Ki   Ab  Tak    Khaar   Hun

 Poet: Meer   Anees

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -