ہمارے آگے ترا جب کسو نے نام لیا | میر تقی میر |

ہمارے آگے ترا جب کسو نے نام لیا | میر تقی میر |
ہمارے آگے ترا جب کسو نے نام لیا | میر تقی میر |

  

ہمارے آگے ترا جب کسو نے نام لیا

دل ستم زدہ کو ہم نے تھام تھام لیا

خراب رہتے تھے مسجد کے آگے میخانے

نگاہ مست نے ساقی کی انتقام لیا

مزا دکھا دیں گے بے رحمی کا تری صیاد

گر اضطراب اسیری نے زیر دام لیا

مرے سلیقے سے میری نبھی محبت میں

تمام عمر میں ناکامیوں سے کام لیا

اگرچہ گوشہ گزیں ہوں میں شاعروں میں میر

پہ میرے شور نے روے زمیں تمام لیا

شاعر: میر تقی میر

(شعری مجموعہ: دیوانِ میر)

Hamaaray   Aagay   Tira   Jab   Kasu   Nay   Naam   Liya

Dil-e-Sitam   Zadaa   Ko   Ham   Nay   Thaam   Thaam    Liya

 Kharaab   Rehtay   Thay   Masjid   K   Aagay   Maikhaanay

Nigaah-e-Mast    Nay   Saaqi   Ki   Intaqaam   Liya

 Maza   Dikhaa   Den   Gay  Be   Rehmi    Ka   Tiri   Sayyaad

Gar  Iztaraab -e-Aseeri    Nay   Zer-e-Daam   Liya

 Miray   Saleeqay   Say    Meri   Nibhi    Muhabbat   Men

Tamaam   Umr   Men   Nakaamiun   Say   Kaam   Liya

 Agarcheh    Gosha   Guzeen    Hun    Main    Shaairon    Men   MEER

Pa   Meray    Shor   Nay    Roo-e-Zameen    Tamaam    Liya

Poet: Meer  Taqi   Meer

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -