عیش سے بے نیاز ہیں ہم لوگ | اسرارالحق مجاز|

عیش سے بے نیاز ہیں ہم لوگ | اسرارالحق مجاز|

  

عیش سے بے نیاز ہیں ہم لوگ 

بے خود سوز و ساز ہیں ہم لوگ 

جس طرح چاہے چھیڑ دے ہم کو 

تیرے ہاتھوں میں ساز ہیں ہم لوگ 

بے سبب التفات کیا معنی 

کچھ تو اے چشم ناز ہیں ہم لوگ 

محفل سوز و ساز ہے دنیا 

حاصل سوز و ساز ہیں ہم لوگ 

کوئی اس راز سے نہیں واقف 

کیوں سراپا  نیاز  ہیں ہم لوگ 

ہم کو رسوا نہ کر زمانے میں 

بسکہ تیرا ہی راز ہیں ہم لوگ 

سب اسی عشق کے کرشمے ہیں 

ورنہ کیا اے مجازؔ ہیں ہم لوگ 

شاعر: اسرارالحق مجاز

(شعری مجموعہ: آہنگ، سالِ اشاعت، 1952)

Aish    Say   Be Nayaaz    Hen   Ham   Log

Be  Khud -e-Soz  -o- Saaz     Hen    Ham   Log

Jiss   Tarah   Chaahay   Cherr   Day   Ham   Ko

Teray    Haathon    Men   Saaz   Hen   Ham   Log

Be Sabab    Iltifaat    Kaya    Maani

Kuch   To   Ay   Chashm -e- Naaz   Hen   Ham   Log

Mehfil - e -  Soz -o- Saaz    Hay   Dunya

Haasil - e - Soz - o  - Saaz   Hen   Ham   Log

Koi   Iss   Raaz   Say   Nahen   Waaqif

Kiun   Saraapa   Nayaaz   Hen   Ham   Log

Ham   Ko   Ruswa   Na   Kar   Zamaanay   Men

Baskeh   Tera   Hi   Raaz   Hen   Ham   Log

Saab   Usi   Eshq   K   Karishmay    Hen 

Warna   Kay   Ay   MAJAZ   Hen   Ham   Log

Poet: Israrul    Haq   Majaz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -