آنکھوں سے نور دل سے خوشی چھین لی گئی  | اقبال عظیم |

آنکھوں سے نور دل سے خوشی چھین لی گئی  | اقبال عظیم |
آنکھوں سے نور دل سے خوشی چھین لی گئی  | اقبال عظیم |

  

آنکھوں سے نور دل سے خوشی چھین لی گئی 

ہم سے ہماری زندہ دلی چھین لی گئی 

اک روز اتفاق سے ہم مسکرائے تھے 

اس کی سزا میں ہم سے ہنسی چھین لی گئی 

اربابِ کم نظر بھی ہیں جلوؤں سے فیض یاب

دیدہ وروں سے دیدہ وری چھین لی گئی

کتنے چراغ نور سے محروم ہو گئے 

جب سے ہماری خوش نظری چھین لی گئی 

شکوہ مرا مزاج نہ ماتم مری سرشت 

ہر چند مجھ سے خندہ لبی چھین لی گئی 

صد شکر بالخصوص نوازا گیا مجھے

آنسو عطا  ہوئے  ہیں خوشی  چھین لی گئی

اقبالؔ اس خوشی کا بھروسہ بھی کچھ نہ تھا 

اچھا ہوا یہ درد سری چھین لی گئی 

شاعر: اقبال عظیم

(شعری مجموعہ: مضراب و رباب)

Aankhon    Say    Noor  ,   Dil   Say   Khushi   Chheen   Li   Gai

Ham   Say   Hamaari   Zinda   Dili  Chheen   Li   Gai

Ik    Roz    Ittefaaq    Say   Ham   Muskaraaey   Thay

Uss   Ki    Saza   Men   Ham   Say   Khushi  Chheen   Li   Gai

Arbaab-e- Kam    Nazar   Bhi   Hen   Jalwon   Say   Faizyaab

Deeda    Waron   Say   Deeda    Wari Chheen   Li   Gai

Kitnay    Charaagh    Noor    Mehroom    Ho   Gaey

Jab    Say    Hamaari     Khush     Nazari  Chheen   Li   Gai

Shikwa    Mira    Mizaaj  ,   Na    Maatam     Miri    Sarisht

Har    Chand      Mujh    Say    Miri    Khanda    Labi   Chheen    Li    Gai

Sad    Shukr     Bilkhusoos    Nawaaza    Gaya    Mujhay

Aansu    Ata    Huay    Hen   ,    Khushi    Chheen   Li   Gai

IQBAL    Iss    Khushi    Ka    Bharosa   Bhi   Kuchh   Na   Tha

Achha    Hua   ,   Yeh    Dard    Sari  Chheen   Li   Gai

Poet: Iqbal  Azeem

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -