کھل کے ملنے کا سلیقہ آپ کو آتا نہیں| وسیم بریلوی |

کھل کے ملنے کا سلیقہ آپ کو آتا نہیں| وسیم بریلوی |
کھل کے ملنے کا سلیقہ آپ کو آتا نہیں| وسیم بریلوی |

  

کھل کے ملنے کا سلیقہ آپ کو آتا نہیں

اور میرے پاس کوئی چور دروازہ نہیں

وہ سمجھتا تھا اسے پا کر ہی میں رہ جاؤں گا

اس کو میری پیاس کی شدت کا اندازہ نہیں

کوئی بھی دستک کرے آہٹ ہو یا آواز دے

میرے ہاتھوں میں مرا گھر تو ہے دروازہ نہیں

اپنوں کو اپنا کہا چاہے کسی درجے کے ہوں

اور جب ایسا کیا میں نے تو شرمایا نہیں

اس کی محفل میں انہیں کی روشنی جن کے چراغ

میں بھی کچھ ہوتا تو میرا بھی دیا ہوتا نہیں

تجھ سے کیا بچھڑا مری ساری حقیقت کھل گئی

اب کوئی موسم ملے تو مجھ سے شرماتا نہیں

شاعر: وسیم بریلوی

 ( شعری مجموعہ:آنکھ آنسو ہوئی؛سال اشاعت،2000)

Khull   K   Milnay   Ka   Saleeqa   Aap   Ko  Aata   Nahen 

Aor   Meray   Paas   Koi   Chor   Darwaaza   Nahen

 Wo   Samajhta   Tha   Usay   Paa   Kar   Hi   Main   Reh   Jaaun

Uss   Ko   Meri   Payaas   Ki   Shiddat   Ka   Andaaza   Nahen

 Koi   Bhi   Dastak   Karay   Aahat   Ho   Ya   Awaaz   Day

Meray   Hathon   Men   Mira   Ghar   To   Hay    Darwaaza   Nahen

 Apnon   Ko   Apna   Kaha   Chaahay   Kisi   Darjay   K   Hon

Aor    Jab   Aisa   Kiya   Main   Nay   To   Sharmaaya   Nahen

 Uss   Ki   Mehfill   Men   Unhi    Ki   Roshni   Jin   K   Charaagh

Main   Bhi   Kuchh   Hota   To   Mera   Bhi   Diya   Hota   Nahen

 Tujh   Say   Kaya   Bichhrra   Miri   Saari  Haqeeqat   Khull   Gai

 Ab   Koi   Maosam   Milay   To   Mujh   Say   Sharmaata   Nahen

 Poet: Wasim   Barelvi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -