کیا دکھ ہے سمندر کو بتا بھی نہیں سکتا| وسیم بریلوی |

کیا دکھ ہے سمندر کو بتا بھی نہیں سکتا| وسیم بریلوی |
کیا دکھ ہے سمندر کو بتا بھی نہیں سکتا| وسیم بریلوی |

  

کیا دکھ ہے سمندر کو بتا بھی نہیں سکتا

آنسو کی طرح آنکھ تک آ بھی نہیں سکتا

تو چھوڑ رہا ہے تو خطا اس میں تری کیا

ہر شخص مرا ساتھ نبھا بھی نہیں سکتا

پیاسے رہے جاتے ہیں زمانے کے سوالات

کس کے لیے زندہ ہوں بتا بھی نہیں سکتا

گھر ڈھونڈ رہے ہیں مرا راتوں کے پجاری

میں ہوں کہ چراغوں کو بجھا بھی نہیں سکتا

ویسے تو اک آنسو ہی بہا کر مجھے لے جائے

ایسے کوئی طوفان ہلا بھی نہیں سکتا

شاعر: وسیم بریلوی

 ( شعری مجموعہ:آنکھ آنسو ہوئی؛سال اشاعت،2000)

Kaya   Dukh   Hay   Samandar   Ko   Bata   Bhi   Nahen   Sakta

Aansu   Ki   Tarah   Aankh   Tak   Aa   Bhi   Nahen   Sakta

 Tu   Chorr    Raha   Hay   To   Khataa   Iss   Men   Tiri   Kaya

Har   Shakhs   Mira   Saath   Nibhaa   Bhi   Nahen   Sakta

 Payaasay   Rahay   Jaatay   Hen   Zamaanay    K   Sawalaat

Kiss   K   Liay   Zinda   Hun   Bataa   Bhi   Nahen   Sakta

 Ghar   Dhoond   Rahay   Hen    Mira    Raaton   K   Pujaari

Main   Hun   Keh    Charaaghon   Ko   Bujhaa   Bhi   Nahen   Sakta

Waisay   To    Ik    Aansu   Hi   Bahaa   Kar   Mujhay   Lay   Jaaey

Aisay   Koi   Tufaan   Hilaa   Bhi   Nahen   Sakta

 

Poet: Wasim   Barelvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -