اسلام آباد ہائیکورٹ نے رانا شمیم پر فرد جرم عائد کر دی 

اسلام آباد ہائیکورٹ نے رانا شمیم پر فرد جرم عائد کر دی 
اسلام آباد ہائیکورٹ نے رانا شمیم پر فرد جرم عائد کر دی 

  

اسلام آباد  ( ڈیلی پاکستان آن لائن ) اسلام آباد ہائیکورٹ نے سابق چیف جج رانا شمیم پر فرد جرم عائد کر دی ، چیف جسٹس اطہر من اللہ نے خود فرد جرم پڑھ کر سنائی ۔

نجی ٹی وی دنیا نیوز کے مطابق اسلام آباد ہائیکورٹ میں سابق چیف جج رانا شمیم کے بیان پر توہین  عدالت کیس کی سماعت ہوئی ، بیان حلفی کیس میں سابق چیف جج  گلگت بلتستان رانا شمیم پر فرد جرم عائد کر دی گئی، چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ  اطہر من اللہ نے  چارج شیٹ پڑھ کر سنائی، ریمارکس میں  کہا کہ ایک بیانیہ دے  کر اسلام آباد ہائی کورٹ  کو فوکس کیا  گیا، یہ کس طرح کا بیانیہ ہے کہ اس عدالت کے ججز کمپرومائزڈ ہیں؟یہ عدالت سرعام احتساب پر یقین رکھتی ہے۔

دوران سماعت اٹارنی جنرل نے اسلام آباد ہائی کورٹ  سے  صحافیوں پر فرد جرم عائد نہ کرنے کی استدعا کر دی، عدالت کی جانب سے انصار عباسی سمیت دیگر میڈیا نمائندوں پر فرد جرم کی کارروائی موخرکر دی گئی۔

اس سے قبل عدالت نے ریمارکس دیے کہ  راناشمیم نےبیان حلفی میں سنگین الزامات عائدکیے، ہمیں کچھ نہیں چھپانا،نہ چھپائیں گے، بتائیں جولائی 2018سےآج تک کون ساحکم کسی کی ہدایت پرجاری ہوا؟،  آپ بتادیں اس عدالت کےساتھ کسی کوکوئی مسئلہ ہے،اس عدالت کی بہت بےتوقیری ہوگئی، اس عدالت کےحوالےسےہی تمام بیانیےبنائےگئے، آئینی عدالت کےساتھ بہت مذاق ہوگیا، عدالت لائسنس نہیں دےسکتی کہ کوئی ایسےبےتوقیری کرے۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیے کہ  آپ کواحساس نہیں کیس پراثراندازہونےکی کوشش کی گئی، یہ عدالت اوپن احتساب پریقین رکھتی ہے، اخبارکےآرٹیکل کاتعلق ثاقب نثارسےنہیں اسلام آبادہائیکورٹ سےہے، لوگوں کوبتایاگیاکہ اس کورٹ کےججزکمپرومائزڈہیں، کیس 2 روزبعدسماعت کیلئےمقررتھاجب سٹوری شائع کی گئی، اگرکوئی غلطی تھی توہمیں بتادیں ہم اس پرایکشن لیں گے۔عدالت نے رانا شمیم پر فرد جرم عائد کر دی جس میں رانا شمیم پر عائد الزامات پڑھ کر سنائے گئے ۔ 

مزید :

اہم خبریں -قومی -