دنیا کا چلن ترک کیا بھی نہیں جاتا | یگانہ چنگیزی |

دنیا کا چلن ترک کیا بھی نہیں جاتا | یگانہ چنگیزی |
دنیا کا چلن ترک کیا بھی نہیں جاتا | یگانہ چنگیزی |

  

دنیا کا چلن ترک کیا بھی نہیں جاتا 

اس جادۂ باطل سے پھرا بھی نہیں جاتا 

زندانِ مصیبت سے کوئی نکلے تو کیونکر 

رسوا سرِ بازار ہوا بھی نہیں جاتا 

دل بعدِ فنا بھی ہے گراں بارِامانت 

دنیا سے سبک دوش اٹھا بھی نہیں جاتا 

کیوں آنے لگے شاہد عصمتِ سر بازار 

کیا خاک کے پردے میں چھپا بھی نہیں جاتا 

اک معنی بے لفظ ہے اندیشۂ فردا 

جیسے خط قسمت کہ پڑھا بھی نہیں جاتا 

شاعر: یگانہ چنگیزی

 ( شعری مجموعہ:گنجینہ؛سالِ اشاعت،2007)

Dunya   Ka   Chalan   Tark   Kiya   Bhi   Nahen   Jaata

Uss   Jaada-e-Baatil   Say   Phira   Bhi   Nahen   Jaata

 Zindaan-e-Museebat   Say   Koi   Niklay   To   Kiun   Kar

Ruswa   Sar-e-Bazaar   Hua   Bhi   Nahen    Jaata

Dil   Baad -e-Fanaa   Bhi   Hay   Giraan   Baar -e-Amaanat

Dunya   Say   Subak   Dosh   Uthaa   Bhi   Nahen    Jaata

 Kiun   Aanay   Lagay   Shahid   Ismat-e-Baar

Kaya   Khaak   K   Parday   Men   Chhupa   Bhi   Nahen    Jaata

 Ik   Maani   Be   Lafz   Hay   Andaisha-e-Farda

Jaisay   Khat   Qismat   Keh   Parrha   Bhi   Nahen    Jaata

 Poet: Yagana   Changezi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -