اشِکِ رواں کی نہر ہے اور ہم ہیں دوستو|منیر نیازی|

اشِکِ رواں کی نہر ہے اور ہم ہیں دوستو|منیر نیازی|
اشِکِ رواں کی نہر ہے اور ہم ہیں دوستو|منیر نیازی|

  

اشِکِ رواں کی نہر ہے اور ہم ہیں دوستو

اُس بے وفا کا شہر ہے اور ہم ہیں دوستو

یہ اجنبی سی منزلیں اور رفتگاں کی یاد

تنہائیوں کا زہر ہے اور ہم ہیں دوستو 

لائی ہے اب اڑا کے موسموں کی باس

برکھا کی رت کا قہر ہے اور ہم ہیں دوستو 

دل کو ہجوم نکہت مہ سے لہو کئے 

راتوں کا پچھلا پہر ہے اور ہم ہیں دوستو 

پھرتے ہیں مثل موج ِ ہوا شہر شہر میں

آوارگی کی لہر ہے اور ہم ہیں دوستو

آنکھوں میں اڑ رہی ہے لٹی محفلوں کی دھول

عبرت سرائے دہر ہے اور ہم ہیں دوستو

شاعر: منیر نیازی

Ashq -e -Rawan   Ki   Nehr   Hay   aor   Ham   Hen   Dosto

Uss   Bewafa   Ka  Shehr   Hay   aor   Ham   Hen   Dosto

Ye   Anjabi   Si   Manzlen   Aor   Raftgaan   Ki   Yaad

Tanhaaion   Ka   Zehr   Hay   aor   Ham   Hen   Dosto

Laaee   Hay   Ab   Urra   K   Mosmon   Ki   Baas

Barkha   Ki   Rut   Ka   Qehr   Hay   aor   Ham   Hen   Dosto

Dil   Ko   Hujoom   Nikhat- e- Mah  Say   Lahoo  Kiay

Raton   Ka   Pichla   Pehr   Hay   aor   Ham   Hen   Dosto

Phirtay   Hen   Misl- e -Moj -e -Hawa   Shehr   Shehr   Men

Awaargi   Ki   Lehr   Hay   aor   Ham   Hen   Dosto

 Aankhon   Men   Urr   Rahi   Hay   Lutti   Mehfilon   Ki    Dhool

 Ibrat   Sara- e -Dehr   Hay   aor   Ham   Hen   Dosto

Poet: Muneer   Niyazi

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -