براڈشیٹ سکینڈل کی تحقیقات کیلئے قائم کمیٹی پر عوام مطمئن نہیں، سپریم کورٹ تحقیقات کروائے،   سراج الحق  کا مطالبہ

براڈشیٹ سکینڈل کی تحقیقات کیلئے قائم کمیٹی پر عوام مطمئن نہیں، سپریم کورٹ ...

  

کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ  براڈشیٹ سکینڈل کی تحقیقات کے لیے بنائی گئی کمیٹی پر عوام مطمئن نہیں، سپریم کورٹ تحقیقات کروائے،حکمران داخلی اور خارجی محاذوں پر ناکام ہو گئے، عوام کو جھوٹے وعدوں اور دعوؤں پر ٹرخایا جا رہا ہے،تحریک انصاف کی حکومت اورپاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کی سیاست کے ایجنڈے میں اسلامی نظام کا قیام شامل نہیں،ملک میں حکومتیں تو تبدیل ہوتی رہیں لیکن عوام کی حالت نہیں بدلی، عوام کے خلاف ظالم و کرپٹ اشرفیہ، جاگیرداروں اور وڈیروں نے گٹھ جوڑ کر رکھا ہے، ان کی اپنی جیبیں اور تجوریاں تو بھری ہوئی  ہیں لیکن انہوں نے عوام کو  غربت، مہنگائی،بے روزگاری اور جہالت کاتحفے دیئے، حکومت نے الیکٹرسٹی ٹیرف میں 15فیصد اضافہ کر کے کروڑوں صارفین کے گھروں پر بجلی گرا دی ہے۔

کراچی میں استقبالیہ تقریب سے خطاب کرتےسینیٹر سراج الحق نے کہا کہ  بے حس حکمرانوں نے آئی ایم ایف اور ورلڈ بنک کے احکامات پر سرتسلیم خم کیا ہے،ملک میں بجلی، گیس اور پیٹرول نایاب چیزیں بن گئیں، بجلی گھروں میں آتی نہیں قیمتوں میں اضافہ کر کے عوام کے ذہنوں پر گرا دی جاتی ہے،کراچی کی روشنیوں کو واپس لانے کے دعویداروں نے شہری مسائل میں مزید اضافہ کیا، چوکوں چوراہوں میں کچرے کے ڈھیر لگے پڑے ہیں، لاکھوں لوگوں کو پینے کا پانی تک میسر نہیں۔ پورٹ سٹی کے لیے ڈویلپمنٹ پیکیج کا 11سو ارب صرف لفظی جادوگری تک محدود رہا۔

انہوں نے کہا کہ حکمران عوام کے لیے وبالِ جان بن چکے ہیں اورانھوں نے استعمار کی وفاداری میں تمام حدیں پھلانگ دی ہیں،ملک کو مکمل طور پر آئی ایم ایف اور ورلڈ بنک کی غلامی میں دے دیا گیا ہے،عالمی طاقتوں کے اشاروں پر خارجہ اور داخلہ پالیسیاں تشکیل دی جا رہی ہیں،موجودہ حکمران بھی وہی کچھ کر رہے ہیں جو ماضی کے حکمرانوں کا وطیرہ تھا،عوام کو ریلیف پہنچانے کے لیے پی ٹی آئی نے اپنا آدھا دور حکومت گزر جانے کے باوجود ایک قدم نہیں اٹھایا، لنگرخانوں کی تعمیر پر زور ہے جب کہ عوامی فلاح کا ایک بڑا منصوبہ بھی متعارف نہیں کرایا گیا، تحریک انصاف کی حکومت نے جولائی سے دسمبر تک تقریباً چھ ارب ڈالر غیر ملکی قرضے لیے جو کہ ایک ریکارڈ ہے۔

امیر جماعت اسلامی نے وزیراعظم کو ایک دفعہ پھر وہ وعدہ یاد دلایا جب وہ یہ دعوے کرتے تھے کہ کسی سے بھیک نہیں مانگیں گے اور اقتدار سنبھالنے کے بعد ملک کو خودداری اور استحکام کی منزل کی جانب لے کر جائیں گے، لیکن کرسی اقتدار پر براجمان ہونے کے بعد پی ٹی آئی نے ہر فیلڈ میں نااہلی کے ریکارڈ قائم کیے۔ انھوں نے کہا کہ بنیادی اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں گزشتہ ڈھائی برسوں کے دوران دو سو سے تین سو فیصد اضافہ ہوا اس کے ساتھ ساتھ ہر ماہ عوام پر پیٹرول بم گرایا جاتا ہے، گیس کی قیمتیں بڑھائی گئیں اور رہی سہی کسر حکومت نے بجلی کی قیمت میں دو روپے فی یونٹ اضافہ کر کے نکال دی، ملکی تاریخ میں یہ پہلی دفعہ ہوا ہے کہ کم یونٹ استعمال کرنے والے صارفین کے بلوں میں بھی اضافہ کیا گیا ہے،غریب عوام کی پیٹھ پر کوڑے برسائے جا رہے اور پشاور سے کراچی تک ان کا کوئی پرسانِ حال نہیں،حکمران جان لیں کہ عوام ان سے تنگ آ چکے ہیں اور انھیں مزید برداشت کرنے کے لیے ہرگز تیار نہیں ہیں ۔

مزید :

قومی -