معروف غزل گو شاعر بسمل الہٰ آبادی کا یومِ وفات(23 نومبر)

معروف غزل گو شاعر بسمل الہٰ آبادی کا یومِ وفات(23 نومبر)
معروف غزل گو شاعر بسمل الہٰ آبادی کا یومِ وفات(23 نومبر)

  

بسمل الہٰ آبادی:

بسمل الہٰ آبادی کا اصل نام سکھ دیو پرشاد تھا۔ وہ 11نومبر 1899ءکو الہٰ آباد(اتر پردیش) میں پید اہوئے۔ اردو غزل گوئی میں ان کا شمار روائتی شاعری کا ایک اہم نام ہے۔ وہ 23نومبر 1975ءکو انتقال کر گئے۔

نمونۂ کلام

کسی طرح بھی کسی سے نہ دل لگانا تھا 

خیالِ یار میں دنیا کو بھول جانا تھا 

جو بے رُخی تھی یہی رُخ نہیں چھپانا تھا 

مرے خیال میں بھی آپ کو نہ آنا تھا 

اسی سبب سے وہ پردے میں چھپ کے بیٹھے ہیں 

کہ پردے پردے میں کچھ اُن کو رنگ لانا تھا 

اَزل سے روح جو پھونکی گئی ہے ذَروں میں 

تو یہ سمجھ لو  کہ جلوہ اسے دکھانا تھا 

زمانہ کھنچ کے پہنچتا ہے اپنے مرکز پر 

ضرور دائرۂ زندگی میں آنا تھا 

شاعر: بسمل الہٰ آبادی

Kisi   Tarah   Bhi   Kisi   Say   Na   Dil   Lagaana   Tha

Khayaal-e-Yaar   Men   Dunya   Ko   Bhool   Jaana   Tha

 Jo   Be   Rukhi   Thi   Yahi   Rukh   Nahen   Chhupaana   Tha

Miray   Khayaal   Men  Bhi   Aap   Ko   Na   Aana   Tha

 Isi   Sabab   Say   Wo   Parday   Men   Chhup   K   Baithay   Hen

Keh   Parday   Parday   Men   Uss   Ko   Rang   Laana   Tha

 Azal   Say   Rooh   Jo   Phoonki   Gai  Hay   Zarron  Men

To   Yeh   Samajh   Lo   Keh   Jalwa   Usay   Dikhaana   Tha

 Zamaana   Khinch   K   Pahonchta   Hay   Apnay   Markaz   Par

Zaroor   Daaira-e-Zindagi   Men   Aana   Tha

 Poet: Bismil  Allahabadi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -