کوئی دستک کوئی آواز دیتا | جاذب قریشی |

کوئی دستک کوئی آواز دیتا | جاذب قریشی |
کوئی دستک کوئی آواز دیتا | جاذب قریشی |

  

کوئی دستک کوئی آواز دیتا

شکستہ گھر کو بھی اعزاز دیتا

دریچے بند کر کے سوچنا کیا

اندھیروں کو نہ اپنے راز دینا

جو آنکھیں دشت میں گم ہوگئی ہیں

لبِ دریا انہیں آواز دینا

پلٹ آنا غبارِرفتگاں سے

سفر کو اک نیا آغاز دینا

سفرلکھنا خود اپنی خواہشوں کا

مگر تمثیل کا انداز دینا

لہو کا رنگ اُتر آئے ورق پر

تم اپنے غم کو وہ اعجاز دینا

اندھیر شام کا بڑھنے سے پہلے

پرندوں کو پرِ پرواز دینا

وہ جو مجھ سے ابھی مل کر گیا ہے

ذرا س شخص کو آواز دینا

تھکن کے رنگ میں لکھتا ہوں جاذب

ہنر مندی ہے غم کو ساز دینا

شاعر: جاذب قریشی

(شعری مجموعہ: شیشے کا گھر؛سال اشاعت،1991)

Koi    Dastak   Koi   Awaaz   Dena

Shakista   Ghar    Ko   Bhi   Aizaaz    Dena

Dareechay    Band    Kar    K    Sochna   Kaya

Andhairon   Ko    Na    Apnay   Raaz   Dena

Jo    Aankhen    Dhasht    Men    Gum    Ho    Gai   Hen

Lab-e- Darya    Unhen     Awaaz   Dena

Palatt    Aana    Ghubaar -e- Raftagaan   Say

Safar   Ko    Ik    Naya   Aghaaz   Dena

Safar   Likhna   Khud    Apni    Khaahishon   Ka

Magar   Tamseel   Ka    Andaaz   Dena

Lahu   Ka   Rang    Utar   Aaey   Waraq   Par

Tum   Apnay    Gham   Ko   Wo   Aijaaz   Dena

Andhaira    Shaam    Ka    Barrhnay   Say   Pehlay

Parindon   Ko    Par-e- Parwaaz   Dena

Wo   Jo   Mujh   Say   Abhi    Mill   Kar   Gaya   Hay

Zara   Uss   Shakhs   Ko   Awaaz   Dena

Thakan   K    Rang   Men   Likhta   Hun   JAZIB

Hunar   Mandi   Hay   Gham   Ko   Saaz   Dena

Poet: Jazib   Quraishi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -