کاغذی گھر سے نکلنا ہے مجھے | جاذب قریشی |

کاغذی گھر سے نکلنا ہے مجھے | جاذب قریشی |
کاغذی گھر سے نکلنا ہے مجھے | جاذب قریشی |

  

کاغذی گھر سے نکلنا ہے مجھے

اپنی تصویر بدلنا ہے مجھے

جس نے پرچھائیں کو خوشید کیا

اُسی شعلے میں پگھلنا ہے مجھے

ہے ترے لمس کی خواہش مجھ میں

زرد موسم کو بدلنا ہے مجھے

تیرے چہرے کا تعاقب ہے عجب

عمر بھر نیند میں چلنا ہے مجھے

میں چراغ ایسا کہ اک تیرے لیے

گھر کی دہلیز پہ جلنا ہے مجھے

شام رستے میں کھڑی ہے جاذب

اور صحرا سے نکلنا ہے مجھے

شاعر: جاذب قریشی

(شعری مجموعہ: شیشے کا گھر؛سال اشاعت،1991)

Kaaghazi   Ghar   Say   Nikalna   Hay   Mujhay

Apni   Tasveer   Badalna   Hay   Mujhay

Jiss   Nay   Parchhaaen   Nay   Khursheed    Kaya

Usi   Sholay   Men   Pighalna   Hay   Mujhay

Hay   Tiray   Lams   Ki   Khaahish   Mujh   Men

Zard   Mosam   Ko    Badalna   Hay   Mujhay

Teray    Chehray   Ka   Taaqub   Hay Ajab

Umr   Bhar    Neend   Men   Chalna   Hay   Mujhay

Main    Charaagh   Aisa   Keh   Ik   Teray   Liay

Ghar   Ki   Daihleez   Pe   Jalna   Hay   Mujhay

Shaam   Rastay    Men   Kharri  Hay   JAZIB

Aor   Sehra   Say   Nikalna   Hay     Mujhay

Poet: Jazib    Quraishi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -