ہر حقیقت کو بانداز تماشا دیکھا  | جگر مراد آبادی |

ہر حقیقت کو بانداز تماشا دیکھا  | جگر مراد آبادی |
ہر حقیقت کو بانداز تماشا دیکھا  | جگر مراد آبادی |

  

ہر حقیقت کو بانداز تماشا دیکھا 

خوب دیکھا ترے جلووں کو مگر کیا دیکھا 

جستجو میں تری یہ حاصلِ سودا دیکھا 

ایک اک ذرہ کا آغوشِ طلب وا دیکھا 

آئینہ خانۂ عالم میں کہیں کیا دیکھا 

تیرے دھوکے میں خود اپنا ہی تماشا دیکھا 

ہم نے ایسا نہ کوئی دیکھنے والا دیکھا 

جو یہ کہہ دے کہ ترا حسن سراپا دیکھا 

دل آگاہ میں کیا کہیے جگرؔ کیا دیکھا 

لہریں لیتا ہوا اک قطرے میں دریا دیکھا 

شاعر: جگر مراد آبادی

(مجموعہ کلام: آتشِ گل؛سال اشاعت،1972)

Har    Haqeeqat    Ko   Ba    Andaaz-e-Tamaasha   Dekha

Khoob    Dekha    Tireay   Jalwon    Kao    Magar   Kaya    Dekha

Justuju    Men    Tiri    Yeh     Haasil -e-Sawaad   Dekha

Aik   Ik    Zarray    Ka    Aghosh-e- Talab    Waa   Dekha 

Aaina    Khaana -e-Aalam    Men    Kahen     Kaya   Dekha

Teray    Dhokay    Men    Khud   Apna    Hi    Tamaasha   Dekha

Ham   Nay   Aisa   Na    Koi   Dekhnay   Waala   Dekha 

Jo   Yeh    Keh     Day    Keh   Tira   Husn-e-Saraapa   Dekha

Dil-e-Agaah   Men   Kaya   Kahiay   JIGAR   Kaya   Dekha

Lehren    Leta    Hua    Ik    Qatray    Men    Dayra   Dekha

Poet: Jigar   Moradabadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -