خوبرویوں کی  یاریاں نہ گئیں | حسرت موہانی |

خوبرویوں کی  یاریاں نہ گئیں | حسرت موہانی |
خوبرویوں کی  یاریاں نہ گئیں | حسرت موہانی |

  

خوبرویوں کی  یاریاں نہ گئیں 

دل کی بے اختیاریاں نہ گئیں 

عقل صبرآشنا سے کچھ نہ ہوا 

شوق کی بے قراریاں نہ گئیں 

دن کی صحرا نوردیاں نہ چھٹیں 

شب کی اختر شماریاں نہ گئیں 

ہوش یاں سدِ راہِ علم رہا 

عقل کی ہرزہ کاریاں نہ گئیں 

تھے جو ہمرنگِ ناز  اُن  کے ستم 

دل کی امیدواریاں نہ گئیں 

حسن جب تک رہا نظارہ فروش 

صبر کی شرمساریاں نہ گئیں 

طرزِ مومنؔ پہ  مرحبا حسرتؔ 

تیری رنگیں نگاریاں نہ گئیں 

شاعر: حسرت موہانی

(دیوانِ حسرت موہانی، حصہ اول: سال اشاعت،1918)

Khoob    Roiyon   Ki    Yaariyaan   Na   Gaen

Dil   Ki    Be   Ikhtiyariyaan   Na   Gaen

Aql   Sabr    Aashna   Say   Kuch   Na   Hua

Shaoq   Ki   Be   Qarariyaan   Na   Gaen

Din   Ki   Sehra   Nawardiyaan  Na  Chhuten

Shab   Ki    Akhtar    Shumariyaan   Na   Gaen

Hosh   Yaan    Sad-e- Raah-e- Elm   Raha

Aql   Ki   Harza   Kariyaan   Na   Gaen

Thay   Jo    Ham  Rang-e- Naaz   Un   K   Sitam

Dil   Ki   Ummed   Waariyaan   Na   Gaen

Husn   Jab   Tak   Raha   Nazaara   Farosh

Sabr   Ki   Sharmsariyaan   Na   Gaen

Tarz-e-MOMIN     Pe     Marhabaa   HASRAT

Teri   Rangeen   Nigariyaan   Na   Gaen

Poet: Hasrat   Mohani

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -