آج اے دل! لب و رخسار کی باتیں ہی سہی | حمایت علی شاعر |

آج اے دل! لب و رخسار کی باتیں ہی سہی | حمایت علی شاعر |
آج اے دل! لب و رخسار کی باتیں ہی سہی | حمایت علی شاعر |

  

آج اے دل! لب و رخسار کی باتیں ہی سہی

وقت کٹ جائے گا کچھ پیار کی باتیں ہی سہی

یوں تو کٹتی ہی رہے گی غمِ دوراں میں حیات

آج کی رات غمِ یار کی باتیں ہی سہی

زندہ رہنے کی کبھی تو کوئی صورت نکلے

عالمِ عشرتِ دیدار کی باتیں ہی سہی

اب تو تنہائی کو یہ کرب نہ ہو گا برداشت

کچھ نہیں تو در و دیوار کی باتیں ہی سہی

کوئی تو بات چِھڑے آج بہت جی ہے اداس

کم سے کم رحمتِ اغیار کی باتیں ہی سہی

یہ تو طے ہے کہ جئے جائیں گے ہر حال میں ہم

ان کے لب پر رسن و دار کی باتیں ہی سہی

شاعر: حمایت علی شاعر

 (شعری مجموعہ: آگ میں پھول؛سال اشاعت،1956)

Aaj   Ay   Dil   Lab-o-Rukhsaar   Ki     Baaten    Hi   Sahi

Waqt   Katt   Jaaey   Ga    Kuchh   Payaar   Ki   Baaten    Hi   Sahi

Yun   To   Kat,ti   Hi   Rahay   Gi    Gham-e-Daoraan   Men   Hayaat

Aaj   Ki    Raat    Gham-e-Yaar    Ki   Baaten    Hi   Sahi

Zinda    Rehnay    Ki    Kabhi   To   Koi   Soorat   Niklay

؂Aalam-e-Eshrat -e-Dedaar    Ki   Baaten    Hi   Sahi

Ab   To    Tanhaai   Ka   Yeh    Karb    Na   Ho   Ga   Bardaasht

Kuchh    Nahen   To   Dar-o-Dewaar   Ki   Baaten    Hi   Sahi

Koi   To   Baat   Chhirray   Aaj   Bahut    Ji     Hay   Udaas

Kam    Say    Kam    Rehmat-e-Aghyaar    Ki   Baaten    Hi   Sahi

Yeh   To   Tay     Hay    Keh    Jiay    Jaen    Gay    Har   Haal   Men   Ham

Un  K   Lab   Par    Rasan-o-Daar    Ki   Baaten    Hi   Sahi

Poet: Himayat    Ali    Shayar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -