لٹ گیا گھر تو ہے اب صبح کہیں شام کہیں | خلیل الرحمان اعظمی |

لٹ گیا گھر تو ہے اب صبح کہیں شام کہیں | خلیل الرحمان اعظمی |
لٹ گیا گھر تو ہے اب صبح کہیں شام کہیں | خلیل الرحمان اعظمی |

  

لٹ گیا گھر تو ہے اب صبح کہیں شام کہیں

دیکھیے اب ہمیں ملتا بھی ہے آرام کہیں

کہیں ایسانہ ہو فتنہ کوئی برپا نہ ہو جائے

اب کبھی بھول کے لیجے نہ مرا نام کہیں

جب پڑا غم تو بدلتی ہی نہیں یہ دنیا

جا کے اب بیٹھ رہی گردشِ ایام کہیں

میرے احباب کے اخلاص کا پردہ رہ جائے

مجھ کو پہلے ہی ڈبو دے دلِ ناکام کہیں

کوہ و صحرا کی طرف چل تو پڑے ہیں وحشی

پھر انہیں روک نہ لیں تیرے در و بام کہیں

شاعر: خلیل الرحمان اعظمی

 (شعری مجموعہ: آسماں اے آسماں؛سال اشاعت،2000)

Lutt   Gaya   Ghar   To   Hay   Ab   Subh   Kahen   Shaam   Kahen

Daikhiay   Ab   Hamen   Milta    Bhi   Hay   Aaraam   Kahen

Kahen   Aisa   Na   Ho   Fitna   Koi   Barpa   Na   Ho  Jaaey

Ab   Kabhi   Bhool   K   Lijiay   Na   Mira   Naam    Kahen

Jab   Parra   Gham   To    Badalti   Hi   Nahen   Yeh   Dunya

Jaa   K    Ab    Baith   Rahi    Gardish -e- Ayyaam   Kahen

Meray   Ahbaab   K   Ikhlaas   Ka    Parda    Reh   Jaaey

Mujh    Ko    Pehlay   Hi    Dabo    Day    Dil-e-Nakaam   Kahen

Koh-o-Sehra     Ki    Taraff    Chall   To    Parray   Hen   Wehshi

Phir   Inhen    Rok    Na   Len   Teray   Dar-o-Baam   Kahen

Poet: Khalilur   Rehman   Azmi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -