ہنسنے والے اب ایک کام کریں | خمار بارہ بنکوی |

ہنسنے والے اب ایک کام کریں | خمار بارہ بنکوی |
ہنسنے والے اب ایک کام کریں | خمار بارہ بنکوی |

  

ہنسنے والے اب ایک کام کریں 

جشنِ گریہ کا اہتمام کریں 

ہم بھی کر لیں جو روشنی گھر میں 

پھر اندھیرے کہاں قیام کریں 

مجھ کو محرومیِ نظارہ قبول 

آپ جلوے نہ اپنے عام کریں 

اک گزارش ہے حضرتِ ناصح 

آپ اب اور کوئی کام کریں 

آ چلیں اس کے در پہ اب اے دل 

زندگی کا سفر تمام کریں 

ہاتھ اُٹھتا نہیں ہے دل سے خمارؔ 

ہم انہیں کس طرح سلام کریں 

شاعر: خمار بارہ بنکوی

 (شعری مجموعہ: رقصِ مے؛سال اشاعت،1981)

Hansnay  Waalay   Aik  Kaam   Karen

Jashn-e-Giya   Ka   Ehtamaan   Karen

Ham   Bhi   Kar   Len    Jo   Raoshni   Ghar   Men

Phir   Andhiaray   Kahan   Qayaam   Karen

Mujh   Ko    Mehroomi-e-Nazaara   Qubool

Aap   Jalway    Na   Apnay   Aaam   Karen

Ik   Guzaarish   Hay   Hazrat-e-Naaseh!

Aap   Ab   Aor   Koi   Kaam   Karen

Aa   Chalen    Uss   K    Dar   Pe   Ab   Ay   Dil

Zindagi   Ka   Safar    Tamaam   Karen

Haath   Hat,ta    Nahen   Hay   Dil   Say   KHUMAR

Ham   Unhen   Kiss   Tarah   Salaam   Karen

Poet: Khumar   Barabankavi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -