کہ سہرا باندھ کے اک اونٹ بلبلایا ہے| دلاور فگار|

کہ سہرا باندھ کے اک اونٹ بلبلایا ہے| دلاور فگار|
کہ سہرا باندھ کے اک اونٹ بلبلایا ہے| دلاور فگار|

  

اونٹ کی شادی

نیا یہ آج کے پرچہ نے گل کھلایا ہے

کہ سہرا باندھ کے اک اونٹ بلبلایا ہے

شتر کے گھر میں پیامِ بہار ہے سہرا

کبھی کبھی تو بڑا بے مہار ہے سرا

مرے بنے کو مبارک یہ خوش گوار گھڑی

کہ سر کا درد بڑھا ناک میں نکیل پڑی

سمجھ لیا تھا جسے جانور سواری کا

وہ اونٹ بوجھ اٹھائے گا ذمہ داری کا

میاں شتر کو مبارک یہ رشتۂ شادی

اسی کو کہتے ہیں اردو میں قیدِ آزادی

میاں شتر نئی گاڑی کے سفر کو چلے

مجھے خوشی ہے کہ تم آ گئے پہاڑ کے تلے

مجھے بیاہ کی تصویر بھیج دیں جھٹ پٹ

یہ دیکھنا ہے کہ بیٹھے ہیں آپ کس کروٹ

شبِ وصال نہ کرنا   شتر  کوئی غمزہ

کہ ناروا ہے اضافت کے بعد اک ہمزہ

شاعر: دلاور فگار 

 (شعری مجموعہ"خدا جھوٹ نہ  بلوائے" :سال اشاعت،1989)

Oonth    Ki   Shaadi

Naya   Yeh   Aaj   K   Parcha   Nay   Gull   Khilaaya

Keh   Sehra    Baandh   K   Aik    Oonth   Bulbulaaya

Shutr   K   Ghar   Men   Payaam-e- Bahaar   Hay   Sehra

Kabhi   Kabhi   To   Barra    Be   Muahar   Hay   Sehra

Miray    Bannay   Ko    Mubarak   Yeh    Khushgawaar   Gharri

Keh   Sar    Ka    Dard   Barrha   Naak   Men   Nukail   Parri

Samajh   Liya   Tha   Jisay   Jaanwar   Sawaari   Ka

Wo   Oonth   Bojh   Uthaaey   Ga   Zimmadaari   Ka

Mian   Shutr   Ko   Mubaarak   Yeh    Rishta-e-Shaadi

Isi   Ko   Kehtay   Hen   Urdu   Men   Qaid-e-Aazadi

Mian   Shutr   Nai   Gaarri   Liay   Naey   Safar   Ko   Chalay

Mujhay   Khushi   Hay   Keh   Tum     Aa   Gaey    Pahaarr   Talay

Mujhay   Biyaah   Ki   Tasveer   Bhaij   Den   Jhat   Patt

Yeh   Dekhna   Hay   Keh    Bethay   Hen   Aap   Kiss   Karwatt

Shab-e-Visaal   Na   Karna   Koi   Shutr   Ghamza

Keh   Narawaa   Hay   Izaafat   K   Baad   Ik   Hamza

Poet: Dilawar    Fiagar

 

 

مزید :

شاعری -مزاحیہ شاعری -