مرتے ہیں تو کیسا لگتا ہے | رئیس فروغ |

مرتے ہیں تو کیسا لگتا ہے | رئیس فروغ |
مرتے ہیں تو کیسا لگتا ہے | رئیس فروغ |

  

مرتے ہیں تو کیسا لگتا ہے

اک سوچ ہے اور سناٹا ہے

اس موجِ نفس کا آج تلک

جنگل کی ہوا سے رشتہ ہے

بادل مری گلیوں کا ساتھی

اب تو گھر میں بھی برستا ہے

میں اپنی حدوں میں لوٹ گیا

جیسے طوفان گزرتا ہے

مہکار سے گھائل ہم بھی ہیں

موسم تو اور کسی کا ہے

ہم جاگتے ہیں ملنے کے لیے

پھر وہ بھی مہینوں سوتا ہے

تری راتوں میں سمو دوں گا

جتنا بھی مجھ میں اُجالا ہے

شاعر: رئیس فروغ

(شعری مجموعہ"رات بہت ہوا چلی"  )

Martay   Hen   To   Kaisa   Lagta   Hay

Ik    Soch   Hay Aor    Sannaata   Hay

Iss   Maoj-e -Nafass   Ka    Aaj   Talak

Jangal   Ki   Hawaa   Say   Rishta   Hay

Baadal   Miri    Galiyon   Ka    Saathi

Ab   To   Gha r   Men   Bhi   Barasta   Hay

Main    Apni   Hadon   Men    Laot   Gaya

Jaisay   Tufaan   Guzarta   Hay

Mehkaar   Say    Ghaayal    Ham   Bhi   Hen

Maosam   To     Aor    Kisi    Ka   Hay

Ham   Jaagtay   Hen   Milnay   K   Liay

Phir   Wo    Bhi    Maheenon   Sota   Hay

Tiri   Raaton   Men    Samo   Dun   Ga

Jitna   Bhi    Mujh    Men    Ujaala   Hay

Poet: Rais   Farogh

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -