ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے

ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے
ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے

  

ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے

تمہیں کہو کہ یہ اندازِ گفتگو کیا ہے

نہ شعلے میں یہ کرشمہ نہ برق میں یہ ادا

کوئی بتاؤ کہ وہ شوخِ تند خو کیا ہے

یہ رشک ہے کہ وہ ہوتا ہے ہم سخن تم سے

وگرنہ خوفِ بد آموزیِ عدو کیا ہے

چپک رہا ہے بدن پر لہو سے پیراہن

ہمارے جَیب کو اب حاجتِ رفو کیا ہے

جلا ہے جسم جہاں، دل بھی جل گیا ہو گا

کریدتے ہو جو اب راکھ جستجو کیا ہے

رگوں میں دوڑتے پھرنے کے ہم نہیں قائل

جب آنکھ سے ہی نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے

وہ چیز جس کے لیے ہم کو ہو بہشت عزیز

سوائے بادۂ گلفامِ مشک بو کیا ہے

پیوں شراب اگر خم بھی دیکھ لوں دو چار

یہ شیشہ و قدح و کوزہ و سبو کیا ہے

رہی نہ طاقتِ گفتار اور اگر ہو بھی

تو کس امید پہ کہیے کہ آرزو کیا ہے

ہوا ہے شہ کا مصاحب پھرے ہے اتراتا

وگرنہ شہر میں غالبؔ کی آبرو کیا ہے

شاعر: مرزا غالب

Har Aik Baat Pe Kehtay Ho Tum Keh Tu Kaya Hay

Tumhen Kaho Keh Yeh Anmdaaz e Guftagu  Kaya Hay

na Sholay Men Yeh karishma , Na Barq Men Yeh Adaa

Koi Bataao Keh Wo Shokh e Tund Khu  Kaya Hay

Yeh rashk Hay Keh Wo Deta Hota Hay Hamsukhan Tum Say

Wagarna Khaof  Bad Aamuzi e Udu  Kaya Hay

Chapak  Raha Hay Badan Par Lahu Say Pairaahan

Hamaari Jaib Ko Ab Aadat e Lahu  Kaya Hay

Jalaa Hay Jism Jahan Dil Bhi Jall Gaya Ho Ga

Kuraidatay Ho Jo Raakh Ab Justaju  Kaya Hay

Ragon Men Dorrtay Phirnay K Ham Nahen Qaail

Jab Aankh Hi Say Na Tapka To Phir Lahu  Kaya Hay

Wo Cheez Jiss K Liay Ham Ko Ho Bahisht Aziz

So Ay Baada e Gulfaam e Mushk Bu  Kaya Hay

Piun Sharaab Agar Kham Bhi Dekh Lun Do Chaar

Yeh Sheesa o Qadah o Kooza o Subu  Kaya Hay

rahi ba taqat e Guftaar Aor Agar Ho Bhi

To Kiss Umeed Pe Kahiay Keh Aarzu  Kaya Hay

Hua Hay Shah Ka Masaaib , Phiray Hay Itraata 

Wagarna Shehr Men GHALIB Ki Aabru  Kaya Hay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -