یوں دی ہمیں آزادی کہ دنیا ہوئی حیران

یوں دی ہمیں آزادی کہ دنیا ہوئی حیران
یوں دی ہمیں آزادی کہ دنیا ہوئی حیران

  

یوں دی ہمیں آزادی کہ دنیا ہوئی حیران

اے قائد اعظم تیرا احسان ہے احسان

 ہر سمت مسلمانوں پہ چھائی تھی تباہی

ملک اپنا تھا اور غیروں کے ہاتھوں میں تھی شاہی

ایسے میں اٹھا دین محمد کا سپاہی

اور نعرہ تکبیر سے دی تو نے گواہی

اسلام کا جھنڈا لیے آیا سر میدان

اے قائد اعظم تیرا احسان ہے احسان

 دیکھا تھا جو اقبال نے اک خواب سہانا

اس خواب کو اک روز حقیقت ہے بنانا

یہ سوچا جو تو نے تو ہنسا تجھ پہ زمانہ

ہر چال سے چاہا تجھے دشمن نے ہرانا

مارا وہ تو نے داؤ کہ دشمن بھی گئے مان

اے قائد اعظم تیرا احسان ہے احسان

 لڑنے کا دشمنوں سے عجب ڈھنگ نکالا

نہ توپ نہ بندوق نہ تلوار نہ پھالا

سچائی کے انمول اصولوں کو سنبھالا

پنہاں تیرے پیغام میں جادو تھا نرالا

ایمان والے چل پڑے سن کر تیرا فرمان

اے قائد اعظم تیرا احسان ہے احسان 

پنجاب سے بنگال سے جوان

چل پڑے سندھی، بلوچی، سرحدی پٹھان

چل پڑے گھر بار چھوڑ بے سرو سامان

چل پڑے ساتھ اپنے مہاجر لیے قرآن

چل پڑے اور قائد ملت بھی چلے ہونے کو قربان

اے قائد اعظم تیرا احسان ہے احسان

نقشہ بدل کے رکھ دیا اس ملک کا تو نے

سایہ تھا محمد کاعلی کا تیرے سر پہ

دنیا سے کہا تو نے کوئی ہم سے نہ الجھے

لکھا ہے اس زمیں پہ شہیدوں نے لہو سے

آزاد ہیں آزاد رہیں گے یہ مسلمان

اے قائد اعظم تیرا احسان ہے احسان

 ہے آج تک ہمیں وہ قیامت کی گھڑی یاد

میت پہ تیری چیخ کے ہم نے جو کی فریاد

بولی یہ تیری روح نہ سمجھو اسے بیداد

اسلام زندہ ہوتا ہے ہر کربلا کے بعد

 گر وقت پڑے ملک پہ ہو جائیے قربان

اے قائد اعظم تیرا احسان ہے احسان

شاعر:فیاض ہاشمی

Yun Di Hamain Aazadi K Duniya Hui Hairan

Aye Quaid e Azam Tera Ehsan Hay Ehsan

Har Simt Pe Musalmano Pe chaaye thi tabahi

Mulk apna tha aur ghairon k hathon main thi shahi

Aise main utha Deen e Muhammad ka Sipahi

Aur Naara e Takbeer say di tu ne gawahi

Islam ka jhanda liye aaya sar e maidan

Aye Quaid e Azam tera ahsan hai ahsan

 Dekha tha jo Iqbal ne ik khawab suhana

Us khawab ko ik roz haqeqat hai banana

Ye socha jo tu ne to hansa tujh pe zamana

Har chaal say chaha tujhe dushman ne harana

Mara woh tu ne dao k dushman bhi gaye maan

Eh Quaid e Azam tera ahsan hai ahsan

Larne ka dushmano say ajab dhang nikala

Na top na bandooq ka talwar na bhala

Sachai k anmol asoolon ko sambhala

Jinnah tere paigham main jadoo tha nirala

Iman wale chal pare sun ker tera farman

Eh Quaid e Azam tera ahsan hai ahsan

Naqsha badal k rakh diya is muk ka tune

Saaya tha Muhammad ka Ali ka tere sir pe

Duniya say kaha tune koi humse na uljhe

Likha hai is zameen pe shaheedon ne lahoo say

Azad hain azad rahain ge ye Musalmaan

Aye Quaid e Azam tera ahsan hai ahsan

Hai Aaj tak hamain woh Qayamat ki Ghari yaad

Mayyat pe Teri Cheekh ke Hum ne jo ki faryad

Boli yeh Teri Rooh na samjho isay Bedaar

Islam Zinda hota hai har Karbala ke bad

Gar Waqt paray mulk pe ho jaye Qurban

Aye Quaid-e-Azam Tera Ahsan hai Ahsan

Poet: Fayyaz Hashmi

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -