الٹی ہو گئیں سب تدبیریں ، کچھ نہ دوا نے کام کیا | میر تقی میر |

الٹی ہو گئیں سب تدبیریں ، کچھ نہ دوا نے کام کیا | میر تقی میر |
الٹی ہو گئیں سب تدبیریں ، کچھ نہ دوا نے کام کیا | میر تقی میر |

  

الٹی ہو گئیں سب تدبیریں ، کچھ نہ دوا نے کام کیا

دیکھا اس بیماریِ دل نے ، آخر کام تمام کیا

عہدِ جوانی رو رو کاٹا، پیری میں لیں آنکھیں موند

یعنی رات بہت تھے جاگے ، صبح ہوئی آرام کیا

ناحق ہم مجبوروں پر یہ تہمت ہے مختاری کی

چاہتے ہیں سو آپ کریں ، ہم کو عبث بدنام کیا

صبحِ چمن میں اس کو کہیں تکلیفِ ہوا لے آئی تھی

رخ سے گل کو مول لیا ، قامت سے سرو غلام کیا

ساعدِ سیمیں دونوں اس کے ہاتھ میں لا کر چھوڑ دیے

بھولے اس کے قول و قسم پر ہائے خیالِ خام کیا

ایسے آہوئے رم خوردہ کی وحشت کھونی مشکل تھی

سحر کیا، اعجاز کیا، جن لوگوں نے تجھ کو رام کیا

میر کے دین و مذہب کو اب پوچھتے کیا ہو ، ان نے تو

قشقہ کھینچا دیر میں بیٹھا ، کب کا ترک اسلام کیا

شاعر: میر تقی میر

(شعری مجموعہ: دیوانِ میر)

Ulti   Ho    Gaeun   Sab   Tadbeeren   Kuchh   Na   Dawaa   Nay   Kaam   Kiya

Dekha   Iss   Bemaari-e-Dil   Nay   ,  Aakhir    Kaam  Tamaam   Kiya

 Ehd-e-Jawaani   Ro   RO   Kaata   ,   Peeri   Men   Leen   Aankhen   Moond

Yaani   Raat    Bahut   Thay   Jaagay   ,  Subh   Hui   Aaraam   Kiya

 Naahaq   Ham   Majbooron  Par   Tohmat   Hay   Mukhtaari   Ki

Chaahtay   Hen   So   Aap   Kren   ,   Ham   Ko   Abass   Badnaam   Kiya

Subh-e-Chaman   Men   Uss   Ko   Kahen   Takleef -e-Hawaa   Lay   Aai   Hay

Rukh   Say   Gull   Ko   Mool   Liya   ,   Qaamat   Say   Sarv   Ghulaam   Kiya

Saad-e-Seemen   Donon   Uss   K   Haath   Men   Laa   Kar   Chorr   Diyay

Bhoolay   Uss   Ko   Qaol-o-Qasam   Par   Haa-e-Kahyaal-e-Khaam   Kiya

 Aisay    Aahoo-e-Ram   Khorda    Ki   Wehshat   Khoni    Mushkill   Thi

Sahar    Kaya  ,   Aijaaz    Kaya  ,   Jin   Logon   Nay   Tujh   Ko   Raam   Kiya

 MEER   K   Deen-o-Mazhab   Ko   Ab   Poochhtay   Kaya   Ho   ,  In   Nay   To

Qashqa   Khaincha   Dair   Men   Baitha   ,   Kab   Ka   Tark   Islam    Kaya

Poet: Meer   Taqi   Meer

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -