کمال عشق ہے دیوانہ ہو گیا ہوں میں | اسرارالحق مجاز|

کمال عشق ہے دیوانہ ہو گیا ہوں میں | اسرارالحق مجاز|
کمال عشق ہے دیوانہ ہو گیا ہوں میں | اسرارالحق مجاز|

  

کمال عشق ہے دیوانہ ہو گیا ہوں میں 

یہ کس کے ہاتھ سے دامن چھڑا رہا ہوں میں 

تمہیں تو ہو جسے کہتی ہے ناخدا دنیا 

بچا سکو تو بچا لو کہ ڈوبتا ہوں میں 

یہ میرے عشق کی مجبوریاں معاذ اللہ 

تمہارا راز تمہیں سے چھپا رہا ہوں میں 

اس اک حجاب پہ سو بے حجابیاں صدقے 

جہاں سے چاہتا ہوں تم کو دیکھتا ہوں میں 

بتانے والے وہیں پر بتاتے ہیں منزل 

ہزار بار جہاں سے گزر چکا ہوں میں 

کبھی یہ زعم کہ تو مجھ سے چھپ نہیں سکتا 

کبھی یہ وہم کہ خود بھی چھپا ہوا ہوں میں 

مجھے سنے نہ کوئی مست بادۂ عشرت 

مجازؔ ٹوٹے ہوئے دل کی اک صدا ہوں میں 

شاعر: اسرارالحق مجاز

(شعری مجموعہ: آہنگ، سالِ اشاعت، 1952)

Kamaal -e-Eshq    Hay   Dewaana   Ho   Gaya   Hun   Main

Yeh   Kiss   K Haath   Say   Daaman   Chhuraa   Raha   Hun   Main

Tumheen   To   Ho   Jisay   Kehti   Hay   Naakhuda   Dunya

Bachaa   Sako   To   Bacha   Lo   Keh   Doobta   Hun   Main

Yeh   Meray    Eshq   Ki   Majboorian   Maaz   ALLAH

Tumhaara   Raaz   Tumheen   Say   Chhupa   Raha   Hun   Main

Is   Ik  Hijaab   Pe   Sao   Behijabiaan   Sadqay

jahaan   Say   Chaahta   Hun  Tum   Ko   Dekhta   Hun   Main

Bataanay  Waalay  Wahen   Par   Bataatay   Hen   Manzil

Hazaar   Baar   Jahan   Say   Guzar   Chuka   Hun   Main

Kabhi   Yeh   Zoam   Keh   Tu    Mujh   Say   chhup    Nahen   Sakta

Kabii   Yeh   Wehm   Keh   Khud   Bhi   Chhupa   Hua   Hun   Main

Mujhay   Sunay   Na   Koi   Mast -e-Baada   Haa -e- Eshrat

MAJAZ   Tootay   Huay   Dil   Ki   Ik   Sadaa   Hun   Main

Poet: Israrul    Haq    Majaz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -