کچھ ایسے زخم بھی ہم دل پہ کھائے بیٹھے ہیں | اقبال عظیم |

کچھ ایسے زخم بھی ہم دل پہ کھائے بیٹھے ہیں | اقبال عظیم |
کچھ ایسے زخم بھی ہم دل پہ کھائے بیٹھے ہیں | اقبال عظیم |

  

کچھ ایسے زخم بھی ہم دل پہ کھائے بیٹھے ہیں

جو چارہ سازوں کی زد سے بچائے بیٹھے ہیں

نہ جانے کون سا آنسو کسی سے کیا کہہ دے

ہم اس خیال سے نظریں جھکائے بیٹھے ہیں

نہ خوفِ بادِ مخالف، نہ انتظارِ سحر

ہم اپنے گھر کے دیے خود بجھائے بیٹھے ہیں

ہمارا ذوق جدا، وقت کا مزاج جدا

ہم ایک گوشے میں خود کو چھپائے بیٹھے ہیں

ہمارے دل میں ہیں محفوظ چند تاج محل

جنہیں ہم اپنا مقدر بنائے بیٹھے ہیں

زمانہ دیکھا ہے ہم نے ہماری قدر کرو

ہم اپنی آنکھوں میں دنیا بسائے بیٹھے ہیں

ہم اپنی ذات میں اک عہد ہیں مگر اقبالؔ

ہم اپنے آپ کو قصداً بھلائے بیٹھے ہیں

شاعر: اقبال عظیم

(شعری مجموعہ: مضراب و رباب)

Kuch   Aisay   Zakhm   Bhi   Ham   Dil   Pe   Khaaey   Baithay   Hen

Jo   Chaara    Saazon   Ki   Zadd   Say    Bachaaey   Baithay   Hen

Najaanay    Kon     Sa    Aansoo    Kisi    Ko    Kaya    Keh   Day

Ham   Iss    Khayal    Say    Nazren    Jhukaaey   Baithay   Hen

Na    Khaof -e- Baad -e- Mukhalif  ,  Na    Intezaar -e-  Sahar

Ham    Apnay    Ghar    K    Diay    Khud    Bujhaaey   Baithay   Hen

Hamaara    Zaoq    Juda  , Waqt    Ka    Mizaaj   Juda

Ham    Aik    Goshay    Men     Khud    Ko    Chupaaey    Baithay   Hen

Hamaray    Dil    Men    Hen    Mehfooz   Chand   Taaj   Mahal

Jinhen    Ham    Apna    Muqaddar   Banaaey    Baithay   Hen

Zamaana    Dekha    Hay    Ham   Nay   Hamaari   Qadr   Karo

Ham   Apni    Aankhon    Men    Dunya    Basaaey   Baithay   Hen

Ham   Apni    Zaat    Men   Ik    Ehd    Hen   Magar   IQBAL

Ham   Apnay    Aap    Ko    Qasdan    Bhulaaey   Baithay   Hen

Poet: Iqbakl    Azeem

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -