سفر نصیب ہیں ہم کو سفر میں رہنے دو | پیزادہ قاسم |

سفر نصیب ہیں ہم کو سفر میں رہنے دو | پیزادہ قاسم |
سفر نصیب ہیں ہم کو سفر میں رہنے دو | پیزادہ قاسم |

  

سفر نصیب ہیں ہم کو سفر میں رہنے دو

سفالِ جاں کو کفِ کوزہ گر میں رہنے دو

ہمیں خبر ہے کسے اعتبار کہتے ہیں

سخن گروں کو صفِ معتبر میں رہنے دو

تمھاری خیرہ سری بھی جواز ڈھونڈے گی

بلا سے کوئی بھی سودا ہو سر میں رہنے دو

یہ برگ و بار بھی لے جاؤ چُوبِ جاں بھی مگر

نمو کی ایک رمق تو شجر میں رہنے دو

اسیر کب یہ قفس ساتھ لے کے اُڑتے ہیں

رہے جو حسرتِ پرواز پر میں رہنے دو

پیرزادہ قاسم

 ( شعری مجموعہ:تیز ہوا کے جشن میں؛سالِ اشاعت،1990)

Safar   Naseeb   Hen   Ham   Ko   Safar   Men   Rehnay   Do

Safaal-e-Jaan   Ko   Kaf-e-Kooza    Gar   Men   Rehnay   Do

 Hamen   Khabar   Hay   Kisay   Aitbaar   Kehtay   Hen

Sukhan   Garon   Ko   Saf-e-Motabar   Men   Rehnay   Do

 Tumhaari   Kheera   Sari   Bhi    Jawaaz   Dhoonday    Gi

Balaa   Say   Koi   Bhi    Saoda   Ho   Sar   Men   Rehnay   Do

 Yeh   Barg -o-Baar   Bhi   Lay   Jaao   Chob-e-Jaan   Bhi   Mmagar

Namu     Ki   Aik   Ramaq   To   Shajar   Men   Rehnay   Do

 Aseer   Kab   Yeh   Qafass   Saath   Lay   K  Urrtay   Hen

Rahay   Jo   Hasrat-e-Parwaaz    Par    Men   Rehnay   Do

 Pot: Pirzada   Qasim

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -