جو حال ہے اس بزم کا ایسا نہ کہیں ہے| کلیم عاجز|

جو حال ہے اس بزم کا ایسا نہ کہیں ہے| کلیم عاجز|
جو حال ہے اس بزم کا ایسا نہ کہیں ہے| کلیم عاجز|

  

جو حال ہے اس بزم کا ایسا نہ کہیں ہے

آئینہ کہیں زلف کہیں شانہ کہیں ہے

اب رقص محبت کا تماشہ نہ کہیں ہے

پروانہ کہیں ہے پرِ پروانہ کہیں ہے

پھیلا چلے جائے ہے بہت عقل کا دامن

پوچھو تو جنوں سے کوئی دیوانہ کہیں ہے؟

دل کا کچھ الگ رنگ ہے چہرے کا کچھ الگ

افسانہ کہیں سُرخیِ افسانہ کہیں ہے

بھرتے ہیں کلیمؔ اپنے لہو اپنی غزل میں

مے ایسی کہیں ہے نہ یہ پیمانہ کہیں ہے

شاعر: کلیم احمد عاجز

 ( شعری مجموعہ:جب فصلِ بہاراں آئی تھی؛سالِ اشاعت،1990)

Jo   Haal   Hay   Iss   Bazm   Ka   Aisa   Na   Kahen   Hay

Aaina   Kahen  ,   Zulf   Kahen  ,   Shaana    Kahen   Hay

 Ab    Raqs -e-Muahabbat    Ka   Tamaasha  Na    Kahen   Hay

Parwaana   Kahaen   Hay   Par   Parwaana   Kahen   Hay

 Phaila   Chalay    Jaaey   Hay    Bahut   Aql   Ka   Daaman

Poochho   To   Junoon   Say   Koi   Dewaana   Kahen   Hay

 Dil   Ka   Alag   Rang   Hay    Chehray    Ka    Kuchh   Alag

Afsaana    Kahen    Surkh-e-Afsaana   Kahen   Hay

 Bhartay   Hen   KALEEM   Apnay   Lahu    Apni   Ghazal   Men

May   Aisi   Kahen   Hay   Na   Paimaana   Kahen   Hay

 Poet: Kaleem   Aajiz

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -